جے آئی ٹی میں وزیراعظم، ان کے صاحبزادوں اور بھائی کی پیشی

جے آئی ٹی میں وزیراعظم، ان کے صاحبزادوں اور بھائی کی پیشی

 اسلام آباد سے ملک الیاس

رمضان المبارک کا آخری عشرہ اپنے اختتام کی جانب رواں دواں ہے بازاروں، شاپنگ سنٹروں میں عید کی خریداری کیلئے لوگوں کا رش اور مہنگائی دونوں عروج پر پہنچے ہوئے ہیں،ایک طرف لوگ عید کی تیاریوں میں مصروف ہیں تو دوسری طرف سیاسی درجہ حرارت روز بروز بڑھ رہا ہے جے آئی ٹی کے سامنے وزیراعظم محمد نوازشریف ان کے صاحبزادوں حسن نواز اور حسین نوازکی پیشیوں کے بعد گزشتہ دنوں وزیراعلی پنجاب محمد شہبازشریف بھی پیش ہوئے، حکمران خاندان کی جے آئی ٹی کے سامنے پیشیوں پر حکومتی اور اپوزیشن رہنما ء اپنے اپنے انداز سے بیانات دے رہے ہیں اپوزیشن جماعتوں خصوصاً کر تحریک انصاف کی قیاد ت اور ان کے رہنما ان پیشیوں کو اپنی فتح قراردے رہے ہیں کہ پہلی بار ایسا ہورہا ہے کہ شریف خاندان اس طرح عدالتوں کاسامنا کررہا ہے جبکہ مسلم لیگ ن کے قائدین،رہنما،کارکنان ان پیشیوں کو قانون کی حکمرانی کو تسلیم کرنیکا اعزاز قرار دے ہیں اس کے ساتھ ساتھ جے آئی ٹی پر حکمران جماعت کے رہنماؤ ں کی جانب سے اعتراضات بھی اٹھائے گئے ہیں اور الزاما ت بھی لگائے جارہے ہیں مسلم لیگ (ن) کے رہنمائطلال چوہدری کا جو بیان سامنے آیا ہے اس میں انکا کہنا تھا کہ وزیراعظم ہاؤس کے فون ٹیپ کرنا بڑا انکشاف ہے ، جے آئی ٹی نے پہلے تصویر لیک کرنے کو تسلیم کیا ، پھرجے آئی ٹی کو بھی وارننگ دی گئی کہ کام دھیان سے کریں ، جے آئی ٹی بار بار وقت مانگ رہی ہے، جے آئی ٹی اپنی گرتی ساکھ کو بچانے کیلئے شکایات پیش کر رہی ہے ، وزیراعظم کی قیادت میں پاکستان ترقی کرتا جائے گا ، عمران خان حسد نہ کریں ، عمران خان اقتدار تک پہنچنے کیلئے پاکستان سے دشمنی نہ کریں ، عمران خان سچ سننے کی ہمت نہیں رکھتے ، میڈیا کو دھمکاتے اور بائیکاٹ کرتے ہیں، ہم اپنا مقدمہ عوام کی عدالت میں رکھیں گے ، انصاف کے طلبگار ہیں ، قانون کے سامنے سر تسلیم خم ہے ، انکا کہنا تھا کہ پاکستان میں ایک شخص ایسا ہے جسے چمپئن ٹرافی میں پاکستان کی جیت سے کوئی خوشی نہیں ہوئی ، خان صاحب پاکستان کی خوشی میں خوش ہوا کریں ۔ اقتدار تک پہنچنے کیلئے پاکستان سے دشمنی نہ کریں ،انکا کہنا تھا کہ عمران خان کب تک نوازشریف کی مخالفت میں پاکستان کی مخالفت کریں گے ۔ وزیراعظم کی قیادت میں تمغے ملتے رہیں گے ،مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی دانیال عزیز نے بھی حسب روایت عمران خان پر طنز کے نشتر برسائے انکا کہنا تھا کہ عمران خان کنگلا تھا اسے بیوی سے قرض لینا پڑا ،اس کا ہمیشہ کسی نہ کسی کی جیب میں ہاتھ رہا ہے،عمران خان بھارتی فرم میں ملازم رہا ہے،وہاں سے پیسے لیتا رہا ہے،ہم مخالفین کی طرح نہیں کہ اداروں کی پاسداری کرتے ہیں، تحریک انصاف اداروں کی تضحیک کرتی ہے،عمران خان انسداد دہشتگردی عدالت کے اشتہاری ہیں، عمران خان کے ہر عدالت سے وارنٹ نکلے ہوئے ہیں ۔ تحریک انصاف نے اپنے ہی صوبے میں احتساب کے ادارے کو تالے لگا دیئے ہیں ۔ عمران خان نے 1997میں پانچ نشستوں پر شکست کھائی۔ عمران خان کو تو 1997 کا ریکارڈ بھی نہیں مل رہا۔جمہوریت کے ساتھ واردات کا ہمیشہ کے لیے خاتمہ ہونا چاہیے انہوں نے الزام لگایا کہ عمران خان حکومتی خرچ پر نتھیاگلی میں رہ رہے ہیں۔

دوسری طرف چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے پانامہ کیس کو ملک میں فیصلہ کن کیس قراردیا ،انکا کہنا تھا پاکستان میں کرپشن کا ٹیلنٹ خوفناک ہے کرپشن کا ٹیلنٹ ملک کو مقروض کرتا جا رہا ہے، ملک سے باہر 800 سے 900 ارب روپے کی جائیداد خریدی گئی،سپریم کورٹ نے کہا نواز شریف نے اپنی کرپشن چھپانے کیلئے ادارے تباہ کیے،پانامہ کیس فیصلہ کرے گاکہ کس طرف جائے گا،ملک میں کرپشن سسٹم کو ڈی ریل کررہی ہے۔فیصلہ نواز شریف کے خلاف ہوا تو سب کی باری آجائے گی،انکا کہنا تھا کہ مغرب میں فرشتے نہیں لیکن جو کرپشن کرتا ہے۔پکڑا جاتا ہے۔وہاں سسٹم ہے۔آصف زرداری ،نواز شریف کے ماتحت فرشتے بھی لگادیں تب بھی کرپشن نہیں رکے گی،آصف زرداری پر لگائے گئے الزامات پر پیپلز پارٹی کے رہنما سینیٹر سعید غنی نے ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کرپشن کے الزامات میں نکالے گئے سرکاری ملازمین کی باقیات کی انجمن اور سیاسی بھگوڑوں کا لنڈا بازار ہے، عمران خان پہلے اپنے والد کے حوالے سے وضاحت کریں اور پھر اپنے دائیں بائیں کھڑے جہانگیر ترین اور اسد عمر کے حوالے سے بھی قوم کو بتائیں کہ ان دونوں کے والد صاحبان کو ملازمتوں سے کیوں برطرف کر دیا گیا تھا، عمران خان اور نواز شریف ایک ہی گملے کے پودے ہیں، دونوں کا سیاسی گْرو ایک ہے۔ پی ٹی آئی اور ن لیگ کی زبان بھی ایک جیسی ہے، پی ٹی آئی جن افراد کو گود لے رہی ہے ان پر کرپشن کے سنگین الزامات ہیں،عمران خان کے قول و فعل میں زمین و آسمان کا تضاد ہے۔ ایک طرف کہتے ہیں کہ دھاندلی کرنے والے کو جیل میں ہونا چاہیے دوسری طرف انتخابی دھاندلی کے الزام میں سپریم کورٹ کی طرف سے فارغ کئے جانے والے عرفان مروت کے پاس حاضری دیتے ہیں، کرپٹ عناصر کی باقیات کی انجمن جھوٹے دعووں اور پرفریب نعروں کے ذریعے عوام کو گمراہ نہیں کر سکتی، تحریک انصاف کے بانی رکن اکبر ایس بابر نے بھی ایک بار پھر عمران خان کو آڑے ہاتھوں لیا ہے انکا کہنا تھا کہ تحریک انصاف جس مقصد کیلئے بنائی گئی تھی اس سے ہٹ چکی ہے، تحریک انصاف کے کارکنوں نے انٹرا پارٹی الیکشن مسترد کردیے ہیں، عمران خان نے تحریک انصاف کو لوٹا گروپ بنادیا ہے،تحریک انصاف میں شامل ہونے والے لوٹے الیکشن میں مسترد ہوں گے،پی ٹی آئی انصاف کی دھجیاں اڑا رہی ہے،جنوری سے چلنے والے کیس کا عمران خان نے ابھی تک جواب نہیں دیا،انصاف اوراحتساب سے چوربھاگتا ہے،ایماندار نہیں، عمران خان ایسے رویے سے عدالتوں کا مذاق اڑارہے ہیں،عمران خان کے خلاف تحقیقات سے بہت سے انکشافات ہوں گے

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع نے قومی کرکٹ ٹیم کی آئی سی سی چیمپئنزٹرافی میں شاندارفتح پر تہنیتی قرارداد متفقہ طور پر منظور کر لی، قراداد میں قومی کرکٹ ٹیم کو آئی سی سی چیمپئنزٹرافی میں شاندار کامیابی پر خراج تحسین پیش کیا اور مبارکباد پیش کی گئی ،کمیٹی نے مقبوضہ کشمیر کے عوام کو پاکستان کرکٹ ٹیم کی فتح پر جشن مناکر پاکستانی عوام کے ساتھ ٹیم کی جیت پر یک جہتی کا اظہار کرنے پر شکریہ ادا کیا اور کہاکہ اس سے ظاہر ہوتا ہے کے کشمیر کی آ زادی کیلئے پاکستان اور کشمیر کے عوام کے دل ایک سا تھ دھڑکتے ہیں۔

مزید : ایڈیشن 1