پاکستان نے زرمبادلہ ذخائر کو 3 ارب ڈالر زیادہ ظاہر کیا‘ ساکھ متاثر ہو سکتی ہے: آئی ایم ایف

پاکستان نے زرمبادلہ ذخائر کو 3 ارب ڈالر زیادہ ظاہر کیا‘ ساکھ متاثر ہو سکتی ...
پاکستان نے زرمبادلہ ذخائر کو 3 ارب ڈالر زیادہ ظاہر کیا‘ ساکھ متاثر ہو سکتی ہے: آئی ایم ایف

  

اسلام آباد (آن لائن) آئی ایم ایف نے کہا ہے موجودہ مالی سال کے دوران پاکستان نے اپنے غیر ملکی زرمبادلہ ذخائر کو 3 ارب ڈالر زیادہ ظاہر کیا ہے جس سے اس کی مالی ساکھ متاثر ہوسکتی ہے جو پہلے ہی سرمایہ کاری اور اس کے نتائج کے حوالے سے شدید تنقید کا شکار ہے۔

آئی ایم ایف کے مطابق پاکستان کی بیرونی فنانسنگ کی ضروریات آئندہ مالی سال کے دوران17ارب ڈالر تک پہنچ سکتی ہیں تاہم عالمی مانیٹری فنڈ نے ان منفی اثرات کا پاکستانی زرمبادلہ ذخائر پر پڑنے والے اثرات کے حوالے سے کچھ نہیں بتایا۔ 16جون کو عالمی ادارے نے آرٹیکل فور کی تفصیلات کے حوالے سے بتایا تھا موجودہ مالی سال کے آخر تک پاکستان کے زر مبادلہ ذخائرممکنہ طور پر18.5ارب ڈالر ہونے چاہئیں تاہم یہ مقررہ ہدف سے بہت دور دکھائی دیتے ہیں۔9 جون کو سٹیٹ بینک کے ڈیٹا کے مطابق پاکستان کے غیر ملکی زر مبادلہ ذخائر15.3ارب ڈالر تھے اور موجودہ صورتحال میں یہ ناممکن دکھائی دیتا ہے کہ پاکستان آئندہ دو ہفتوں میں غیر ملکی زر مبادلہ ذخائر کو18.5ارب ڈالر تک لے جائیگا بالخصوص ایسے حالات میں کہ جب کنٹرول سے باہر تجارتی خسارہ کے باعث ان ذخائر پر بے پناہ دبائو ہے۔ 15.3ارب ڈالر کے غیر ملکی زر مبادلہ ذخائر گزشتہ سال اکتوبر میں جاری ہونے والی آئی ایم ایف کی بارہویں جائزہ رپورٹ سے بھی 5.5 ارب ڈالرکم ہیں۔ادھر وزارت خزانہ کے ذرائع اور ماہرین کے مطابق ان تمام تفصیلات سے پتہ چلتا ہے۔

شاہ سلمان نے ولی عہد محمد بن نائف کو برطرف کر دیا ، صاحبزادہ محمد بن سلمان ولی عہد مقرر

پاکستان کا بیرونی اکائونٹ حکومت پاکستان اور آئی ایم ایف کے جائزوں کے باوجود تیزی سے تباہی کی طرف جا رہا ہے۔ ان ذرائع کا کہنا ہے وزارت خزانہ زر مبادلہ ذخائر بڑھانے کیلئے مہنگے قرضوں پر انحصار کرتی رہی ہے جس کے نتائج اب سامنے آ رہے ہیں۔موجودہ مالی سال2016-17کے دوران آئی ایم ایف نے کرنٹ اکائونٹ خسارہ جی ڈی پی کے1.5فیصد یا4.5ارب ڈالر ظاہر کیا تھا تاہم اب عالمی ادارے نے اسے دوبارہ جائزے کے بعد9ارب ڈالر ظاہر کیا ہے جو اصل سے دگنا سے بھی زائد ہے اور ایسی صورتحال میں غیر ملکی زرمبادلہ ذخائر پر اثر پڑے گا۔موجودہ مالی سال کے آغاز پر آزاد ماہرین معیشت نے کہا تھا کرنٹ اکانٹ خسارہ 8 ارب ڈالر کے قریب ہوسکتا ہے جس پر وزیرخزانہ اسحق ڈار نے انہیں جعلی ماہرین قرار دیا تھا۔

مزید : اسلام آباد