اللہ تعالیٰ کے بعد میرے دل میں ’پائی جان ‘ کیلئے بہت عزت اور محبت ہے: حسن علی

اللہ تعالیٰ کے بعد میرے دل میں ’پائی جان ‘ کیلئے بہت عزت اور محبت ہے: حسن علی

گوجرانوالہ (ڈیلی پاکستان آن لائن )حسن علی کا کہناہے کہ میری زندگی کا سب سے بڑا موڑا اس وقت آیا جب میں صرف 13سال کا تھا ،میرے بھائی نے مجھے چیلنج کیا کہ وہ مجھے ایک اوور میں تین چھکے مارے گا ،لیکن وہ صرف ایک ہی چھکا مارنے میں کامیاب ہوا اور اس نے بطور انعام مجھے میری پہلی سفید رنگ کی شرٹ تحفے میں دی ،جو میں نے بہت لمبا عرصہ سنبھال کر رکھی ،میرے بھائی نے میرے لی بہت قربانیاں دی ہیں ،اس نے اپنے لیے کبھی جوگرز نہیں خریدے وہ میرے لیے خریدتا تھا ،اس نے ہر وقت میرا حوصلہ بڑھایا ۔

گزشتہ سال میچ میں ڈیبو سے قبل میں گھر میں نہیں رہ رہا تھا ،میرے بھائی نے نیٹ کے قریب ہی میرے لی ایک کمرہ تیار کر دیا تھا ،میں صرف گھر تازہ دم ہونے اور والدین سے ملاقات کیلئے ہی جاتا تھا ،میرا بھائی ہمیشہ یہی چاہتاتھاکہ میں اپنی کرکٹ پر دیہان دوں اور اسے سنجیدگی سے لوں ۔

حسن علی کا کہناتھا کہ ایک مرتبہ میرے بھائی نے وکٹ اٹھا کر مرے سر پر دے ماری کیونکہ میں باولنگ پر دیہان نہیں دے رہا تھا اور یہ واقعہ میرے خیال سے 2012میں پیش آ یا ،میں ہمیشہ نئی گیند سے گاولنگ کروانا چاہتا تھا اور میں سے بھائی سے کہا بھی کہ مجھے اس سے کروانے دیا جائے کیونکہ میں بہت ساری خراب گیندیں کی تھی،اس بات پر میرے بھائی غصہ آ گیا اور اس نے وکٹ اٹھا لی ،وہ مجھے مارنا نہیں چاہتا تھا لیکن سٹپس اس کے ساتھ سے کھسک گئے اور میرے سر پر آ لگے اور اس کے بعد میرے سپر ٹانکے لگائے گئے ۔

اللہ تعالیٰ کے بعد میں میرے دل میں میرے بھائی کیلئے عزت اور محبت ہے ،جہاں پر آج میں ہوں اور کامیاب ہوں صرف میرے ’پائی جان‘کی ہی وجہ سے ہے۔میرے بھائی نے میرے لیے بہت قربنانیاں دیں ،کھانے اور سونے سمیت بہت سی چیزوں کی ۔

مزید : کھیل