مثبت تنقید جمہوریت کا حسن مگر تنقید برائے تعمیر ہونی چاہئے, بلوچستان میں ایک ہزار میگاواٹ بجلی کے منصوبے بنائے جائیں گے:نواب ثناء اللہ زہری

مثبت تنقید جمہوریت کا حسن مگر تنقید برائے تعمیر ہونی چاہئے, بلوچستان میں ...
مثبت تنقید جمہوریت کا حسن مگر تنقید برائے تعمیر ہونی چاہئے, بلوچستان میں ایک ہزار میگاواٹ بجلی کے منصوبے بنائے جائیں گے:نواب ثناء اللہ زہری

  

کوئٹہ(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ زہری نے مالی سال کے بجٹ پر بحث کے دوران حکومت پر ہونے والی تنقید کو خوش آئند کہتے ہوئے کہا کہ مثبت تنقید جمہوریت کا حسن ہے مگر تنقید برائے تعمیر ہونی چاہئے ،ہم نے جو اچھے کام کئے ان کا بھی یہاں ذکر کیا اور سراہا جانا چاہئے تھا، کسی نے ہمارے اچھے کام پر توجہ نہیں دی  بلکہ تمام اراکین صرف پی ایس ڈی پی کی بات کرتے رہے، جب بلوچستان میں امن ہوگا تو پی ایس ڈی پی پر عملدرآمد کیا جاسکا گا، ماضی میں امن وامان نہ ہونے کی وجہ سے بھی پی ایس ڈی پی پر عمل نہیں ہوا۔

انہوں نے کہا کہ یہ اس حکومت کا آخری اور اچھا بجٹ ہے ،جسے عوام سراہ رہے ہیں، اپوزیشن کا شکریہ ادا کرتا ہوں کہ انہوں نے ہمارے مثبت اقدامات کی تعریف بھی کی  اور تنقید بھی ، انہوں نے اپوزیشن لیڈر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ کوشش کریں گے کہ جو تجاویز آپ نے دی ہیں ان کو بھی شامل کیا جائے۔ وزیراعلیٰ بلوچستان نے اپوزیشن اراکین کو یقین دہانی کرائی کہ ان کے تحفظات کاازالہ کیا جائے گا، انٹر کالج صحبت پور کو ڈگری کادرجہ دینے ، زمینوں کے ریکارڈ کو کمپیوٹرائزڈ کرنے ،دریجی میں ڈائیلاسز مشین کی فراہمی کا اعلان اور کوئٹہ میں وومن میڈیکل کالج کے قیام کا بھی اعلان کیا ۔انہوں نے کہا کہ کینیڈین کمپنی کے ساتھ معاہدہ طے پاگیا ہے جس کے تحت بلوچستان میں ایک ہزار میگاواٹ بجلی کے منصوبے بنائے جائیں گے۔ انہوں نے بارکھان ہسپتال کو ڈی ایچ کیو کا درجہ دینے کا بھی اعلان کیا جبکہ اسمبلی کے ملازمین کے لئے اعزازیہ دینے کا بھی اعلان کیا ۔

مزید : کوئٹہ