بے نظیر بھٹوایک شخصیت ہی نہیں ایک نظر یہ اور جدوجہد کا نام ہے، فیصل کریم کنڈی

بے نظیر بھٹوایک شخصیت ہی نہیں ایک نظر یہ اور جدوجہد کا نام ہے، فیصل کریم کنڈی

  

پشاور (سٹی رپورٹر) سیاست میں شہید بھٹو کی ابتداء کو بینظیر بھٹو نے انتہا تک پہنچایا، بینظیر بھٹو ایک شخصیت ہی نہیں ایک نظریہ اور جدوجہد کا نام ہے، ان خیالات کا اظہار پاکستان پیپلز پارٹی خیبر پختون خواہ کے صوبائی سیکرٹری جنرل فیصل کریم کنڈی نے محترمہ بے نظیر بھٹو کی 66 ویں یوم پیدائش کے موقع پر الیکٹرانک اور پرنٹ میڈیا کو جاری کئے گئے اپنے ایک بیان میں کہی، انہوں نے کہا کہ محترمہ بے نظیر بھٹو کی 54 سالہ زندگی کے 24 سال ملک میں جمہوریت کی بحالی و بالادستی اور قومی ترقی کی جدوجہد پر محیط ہے۔فیصل کریم کنڈی نے مزید کہا کہ اسلامی دنیا کی عظیم لیڈر بے نظیر بھٹو بے یک وقت عالم اسلام کے لبرل نظریات کا استعارہ تھی تو دوسری طرف ان کی زندگی میں مذہبی رنگ بھی نمایاں تھا، وہ لیڈر جس نے ہمیشہ غریب مزدوروں کی حقوق کی آواز اٹھائی تو دوسری طرف میڈیا کی آزادی اور عدلیہ کی آزادی پر بھی دوٹوک مؤقف اختیار کیا، بات آزاد خارجہ پالیسی کی ہوئی تو وہی بھی ملکی سلامتی کی خاطر اپنی اصولوں پر ڈٹی رہیں.صوبہ کے موجودہ سیاسی صورتحال پر صوبائی سیکرٹری جنرل پاکستان پیپلزپارٹی فیصل کریم کنڈی نے نئے ضم شدہ اضلاع میں جاری الیکشن پر موجودہ صوبائی حکومت کی براہ راست اثر انداز ہونے سمیت ضلع باجوڑ میں ایک سیاسی جماعت کے ساتھ ہونے والے واقعہ پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نئے ضم شدہ اضلاع میں صوبائی حکومت کی اس طرح کے واقعات و اقدامات سے الیکشن متنازعہ ہی رہیں گے اور الیکشن کمیشن اس حوالے سے نا صرف مثبت اقدامات کرے بلکہ اپنی پوزیشن بھی واضح کریں، اس کے علاوہ صوبائی سیکرٹری جنرل نے پاکستان پیپلز پارٹی PK-112 ساؤتھ وزیرستان کے امیدوار عمران مخلص وزیر، ضلعی صدر امان اللہ وزیر، پیپلز یوتھ آرگنائزیشن کے نائب صدر ھمایون وزیر، و دیگر کارکنان پاکستان پیپلزپارٹی ساؤتھ وزیرستان زینت وزیر، جمشید، اقبال، حضرت نور اور عمر وزیر کے خلاف دفعہ 118 کے تحت مقامی انتظامیہ نے جو FIR درج کی ہے، پاکستان پیپلز پارٹی اس کی پر زور الفاظ میں مذمت کرتی ہے اور مقامی انتظامیہ سے FIR واپس لینے کا مطالبہ کرتی ہے، فیصل کریم کنڈی نے کہا کہ یہ سب کچھ پی ٹی آئی کے مقامی امیدواروں اور مقامی انتظامیہ کی ملی بھگت سے کیا جارہا ہے، ان کارکنوں کا گناہ صرف یہ ہے کہ انھوں نے مقامی مسائل کے حل اور پارٹی کو چیئرمین آصف علی زرداری اور دیگر ممبران اسمبلی کا پروڈکشن آرڈر جاری کرنے کا مطالبہ کیا تھا جو انکا قانونی اور آئینی حق ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -