سلیکٹیڈ حکمرانوں نے عوام دشمن بجٹ پیش کیا ہے، پیش کیا ہے، سکندر شیرپاؤ

سلیکٹیڈ حکمرانوں نے عوام دشمن بجٹ پیش کیا ہے، پیش کیا ہے، سکندر شیرپاؤ

  

پشاور(سٹی رپورٹر)قومی وطن پارٹی کے صو با ئی چیئر مین سکندر خان شیر پا ؤنے تبدیلی سرکار کی نئے مالی سال کی بجٹ پر خدشات کا اظہار کر تے ہو ئے کہا ہے کہ سلیکٹیڈ حکمران نے عوام دشمن بجٹ پیش کر دیا جس میں صرف غر یب عوا م کو مہنگا ئی کی سونا می میں ڈوبودیا صوبے کی تا ریخ میں پہلی بار مہنگائی والی بجٹ کو عوام نے مستر د کردیا نابلد حکومت کی نا قص پالیسیوں کی وجہ سے صوبے میں معیشت تباہی کے د ہا نے پر لا کھڑا کر د یا جبکہ حکومت عوا م کی آ نکھوں میں دھول جھونکنے کوشش کر ر ہا ہے کہ وزراء کی تنخواہوں میں اضافہ نہیں کیا گیا مگر اخراجات میں اضافہ ہوتا جا ر ہا ہے اعداد و شمار حقیق پر مبنی نہیں جسمیں اس سال کا خسارہ 40ارب روپے بنتا ہے جبکہ خیبر پختونخوا بجٹ کا 80فیصد انحصار مر کز پر ہوتا ہے مگر مرکز خیبر پختونخوا کو نظر انداز کر کے پنجاب کی ترقی پر نگا ہیں مر کوز کر نا چا ہتے ہیں جبکہ موجود ہ بجٹ میں خیبر پختونخوا نے لوکل گورنمنٹ الیکشن کیلئے ایک روپیہ بجٹ بھی مختص نہیں کر د یا گیا کیونکہ حکومت بلد یا تی الیکشن میں سنجید ہ نہیں ہے قبائلی اضلاع کیلئے جاری شدہ 56ارب روپے بجٹ میں زیر بحث نہیں لا یا گیا حکومت کو اس کی وضا حت کر نا چا ہیے۔گزشتہ روز پشاور پر یس کلب میں پارٹی کے د یگر ر ہنماؤں ہاشم بابر،طارق خان،پی کے 105کے امیدوار علی ر حمان پر یس کانفر نس کر تے ہو ئے سکندر شیر پا ؤ کا کہنا تھا کہ حکومت نے نئے ما لی سال کی بجٹ میں غر یب عوا م پر مہنگائی کے بم گراد یئے ہیں پیٹرولیم مصنو عات میں 60فیصد،آٹا میں 22فیصد،چینی میں 60فیصداور د یگر اشیا ئے خردنوش میں بھی خود سا ختہ اضا فہ کیا تبدیلی سر کار عوا م کو ر یلیف کے بجا ئے مہنگا ئی میں گھیر لیا ہے۔انہوں نے کہاکہ انکم ٹیکس لگانا وفاقی حکومت کا کام ہے لیکن خیبر پختونخوا حکومت نے خود انکم ٹیکس لگا یا جو کہ آ ئین کے متصاد م ہیں، بجٹ ماہانہ 20ہزار کمانے والے تنخوا دار طبقے پر ٹیکس لگانا غیر ائینی ہے اور زراعت کے شعبے کو ٹیکس فری نا کر کے 1جرب زمین پر ٹیکس لگاکر حکومت غریب کسانوں کی روزی روٹھی چین رہی ہے جبکہ دوسری جانب حکومت نے ایک ایکڑ زرعی زمین پر بھی ٹیکس لگا یا جس سے چھوٹے زمیندارشد ید متاثر ہو نگے۔انہوں نے کہاکہ مووجود ہ بجٹ میں وزیر اعظم اور صدر ہا ؤس کے اخراجا ت میں اضافہ ہوا ہے تا ہم وزیر اعظم نے بجٹ میں کوئٹہ اور کراچی کیلئے خصو صی فنڈمختص کر دیئے جبکہ دہشتگردی سے سب سے زیادہ متاثر ہو نے والا صوبے کیلئے ایک پا ئی بھی نہیں ر کھی کیونکہ کٹھ پتلی وزیر اعظم پختونوں کے ساتھ اصل چہر ہ بے نقاب ہو گیا اور وہ پختونو ں کوترقی دینے نہیں چا ہتے جبکہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کیلئے 54ارب روپے مقرر کئے ہے جسمیں 60سے 80ارب روپے کے خسارے کا خدشہ ہے۔انہوں نے کہاکہ قبائلی اضلا ع میں صو با ئی الیکشن کے بعد دس سالا پلان شروع کر د یا جا ئے تا کہ قبائلوں کو مقامی سطح پر نما ئندگی مل جا ئے۔

مزید :

صفحہ اول -