بانی ایم کیو ایم، ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے مجرم!

بانی ایم کیو ایم، ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے مجرم!

  

ایم کیو ایم کے بانیوں اور باغیوں میں شمار ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے فیصلے نے بانی الطاف حسین کی ”مجرمانہ“ سرگرمیوں پر مہر تصدیق ثبت کر دی، فیصلے کے مطابق مقتول کے قتل کا حکم بانی نے دیا اور عدالت نے اب ان کے دائمی وارنٹ گرفتاری بھی جاری کر دیئے۔ یہ عدالتی فیصلہ برطانیہ اور پاکستان کے تفتیشی اداروں کے باہمی تعاون کی بھی ایک بڑی مثال ہے کہ اب تو برطانوی ادارے کی طرف سے مجرموں کی وہ ویڈیوز بھی جاری کر دی گئی ہیں جو ان کی مقتول کا پیچھا کرنے اور قتل کی تیاریوں پر مبنی ہیں۔عدالتی فیصلے ہی کی روشنی میں الطاف بھی ”مجرم“ گردانے گئے ہیں، صرف یہی نہیں اب تو ان کی وہ حالیہ ویڈیو بھی زیر نظر ہے، جس میں وہ یہ کہتے پائے گئے ہیں کہ وہ اور ان کی جماعت سندھ کی پاکستان سے علیحدگی چاہتے ہیں اور یہ پُرامن جمہوری جدوجہد سے ہو گی، دوسرے معنوں میں انہوں نے اس ویڈیو پیغام کے ذریعے اپنے باطنی ارادوں اور بھارت جا کر پاکستان مخالف دیئے گئے بیانات کی بھی تصدیق کر دی ہے۔ یہ لمحہ فکریہ ہے۔اس سلسلے میں وفاقی وزیر فواد حسین چودھری کا واحد بیان نظر سے گذرا، حالانکہ ہمارے وہ سب حضرات جو ذرا ذرا سی بات پر بیان بازی کرتے ہیں، خاموش ہیں، اب تو خود متحدہ پاکستان والوں کو کھل کر بانی سے علیحدگی اور ان کے اعمال سے تائب ہونے کا اعلان کر کے ان کی مذمت بھی کرنا چاہئے، اس سلسلے میں کراچی کے سابق میئر اور پاک سرزمین پارٹی کے سربراہ مصطفےٰ کمال کی مثال کو پیش ِ نظر رکھنا ہو گا اور حکومت پاکستان پر بھی اب یہ فرض عائد ہو گیا ہے کہ وہ عدالتی فیصلے کی روشنی میں برطانیہ کی حکومت سے الطاف حسین کی حوالگی کا مطالبہ کرے، تاکہ ان کو واپس لا کر انصاف کے تقاضے پورے کئے جا سکیں۔

اعتذار

گزشتہ روز اخبار فروش یونین کے صدر چودھری نذیر احمد کی وفات کے حوالے سے لکھے گئے نوٹ میں سہو ہو گیا،ان کے والد چودھری منظور احمد حیات اور علیل ہیں،جبکہ وہ چودھری رشید احمد (مرحوم) کے جانشین تھے، جو تاحیات صدر تھے، ادارہ اس سہو پر معذرت خواہ ہے۔

مزید :

رائے -اداریہ -