سامعہ خان نے کورونا سے متعلق اپنی پیشن گوئی غلط ثابت ہونے پر وزیراعظم کو تنقید کا نشانہ بنا ڈالا ،ایسی بات کہہ دی کہ آپ کی بھی ہنسی چھوٹ جائے

سامعہ خان نے کورونا سے متعلق اپنی پیشن گوئی غلط ثابت ہونے پر وزیراعظم کو ...
سامعہ خان نے کورونا سے متعلق اپنی پیشن گوئی غلط ثابت ہونے پر وزیراعظم کو تنقید کا نشانہ بنا ڈالا ،ایسی بات کہہ دی کہ آپ کی بھی ہنسی چھوٹ جائے

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن )معروف ماہر علم نجوم سامعہ خان نے کورونا وائرس سے متعلق اپنی پیشن گوئی غلط ثابت ہونے پر وضاحت پیش کردی ۔ایک ویڈیو میں انہوں نے کہا کہ میں پندرہ مئی سے کورونا ختم ہونے کا نہیں کہہ رہی تھی ،بلکہ لاک ڈاﺅن اٹھانے کا کہہ رہی تھی ،میں نے کہیں یہ نہیں کہا کہ کورونا ختم ہو جائے گا ۔میں نے کہا تھا پندرہ مئی تک کرفیو لگانا ہو گا اور سخت اقدامات اٹھانے ہونگے ۔میں پاکستان کے لیے کہتی تھی کہ پندرہ مئی تک سخت لاک ڈاﺅن لگائیں تو پھر حالات بہتری کی طرف جاتے ۔سامعہ خان نے کوروناوائرس سے متعلق حکومتی پالیسیوں کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ وزیر اعظم کو اس وقت غریب نظر کیوں نہیں آتے جب مہنگائی بارہ فیصد بڑھی ،میں نے کہا تھا کہ لوگ بھوک سے نہیں مریں گے لیکن کورونا پھیل گیا تو ہمارے ملک کی معیشت بری طرح متاثر ہو گی۔مجھے سمجھ نہیں آتا کہ خان صاحب نے کیوں یہ حل نہیں کیا ،پندرہ مئی تک سخت لاک ڈاﺅن کی ضرورت تھی کیونکہ ہمارے ملک میں غربت سے زیادہ جہالت ہے۔

واضح رہے کہ نجی نیوز چینل جیو کے پروگرام میں سامعہ خان نے پیشن گوئی کرتے ہوئے کہا تھا کہ کورونا وائرس نے 31مارچ سے 15اپریل تک وائرس کا پھیلاﺅ بڑھنا تھا ،15اپریل سے 13یا 15مئی تک زندگی نارمل شروع ہو جائے گی ۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -