موجودہ بجٹ قبائلی عوام کیلئے زیر قاتل ہے‘ روبینہ خالد

موجودہ بجٹ قبائلی عوام کیلئے زیر قاتل ہے‘ روبینہ خالد

  

پشاور (سٹی رپورٹر) پاکستان پیپلزپارٹی کی سینئررہنماسینیٹرروبینہ خالد نے خیبرپختونخواحکومت کے آئندہ مالی سال بجٹ کوصوبے بالخصوص قبائلی عوام کیلئے زہرقاتل قراردیتے ہوئے کہاہے کہ فاٹاانضمام پر مونچوں کو تاؤدینے والی صوبائی حکومت نے قبائلی علاقوں کیلئے بجٹ میں خاطرخواہ رقم مختص نہیں کی جبکہ سابقہ اے ڈی پی کی رقم بھی ضم شدہ اضلاع میں مکمل خرچ نہ ہوسکے قبائلی عوام کی احساس محرومی نئے پاکستان میں مزید بڑھ رہی ہے وفاقی وصوبائی حکومتیں قبائلیوں کی مشکلات کوپس پشت ڈال کرانکے ساتھ کئے گئے وعدوں سے انحراف کررہی ہیں۔صوبائی بجٹ پر اپناردعمل دیتے ہوئے سینیٹرروبینہ خالد نے کہاہے کہ تحریک انصاف کی گزشتہ صوبائی حکومت نے بی آرٹی کاکرپشن زدہ منصوبہ بھی اپنی تجوریاں بھرنے کیلئے شروع کیابلین ٹری سونامی پراجیکٹ میں گھپلے بھی زبان زدعام ہیں موجودہ بجٹ میں حکومت صوبے میں کوئی نیامیگاپراجیکٹ شامل نہیں کرسکی انہوں نے مزیدکہاکہ خیبرپختونخواکے حقوق پر وفاق نے خاموشی اختیارکررکھی ہے جبکہ صوبے کی حکومت اورناکام وزرائعوام کی ترقی وخوشحالی کیلئے اپناحصہ تک نہیں مانگ سکتی بجلی خالص منافع کی مد میں بقایاجات اورآئل اینڈگیس پر ایکسائزڈیوٹی کے حصول میں وزیراعلیٰ محمودخان کی حکومت مکمل ناکام ہوچکی ہے روبینہ خالد نے کہاکہ پرانی سکیموں کاتھروفارورڈوسائل کے برعکس بڑھتاہی جارہاہے حکومت نے آئندہ مالی سال کے بجٹ میں ٹوکن رقم مختص کرنے کیساتھ نئی سکیمیں صرف اس خاطر ڈالی تاکہ آئندہ الیکشن میں اپنی انتخابی مہم کیلئے سامان اکٹھاکرسکیں حکومت کواپنی آمدنی اورمحصولات کااندازہی نہیں یہ بجٹ الفاظ کاہیرپھیر اور غیرمتوازن بجٹ ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -