بلوچستان اسمبلی ہنگامہ، اپوزیشن کے 17اراکین گرفتاری دینے پہنچ گئے ،پولیس کا گرفتار کرنے سے انکار

بلوچستان اسمبلی ہنگامہ، اپوزیشن کے 17اراکین گرفتاری دینے پہنچ گئے ،پولیس کا ...
بلوچستان اسمبلی ہنگامہ، اپوزیشن کے 17اراکین گرفتاری دینے پہنچ گئے ،پولیس کا گرفتار کرنے سے انکار

  

کوئٹہ(ڈیلی پاکستان آن لائن ) بلوچستان اسمبلی میں ہنگامہ آرائی میں ملوث متحدہ اپوزیشن کے 17اراکین گرفتاری دینے کے لئے تھانہ بجلی گھر پہنچ گئے جبکہ پولیس کی جانب سے گرفتا رکرنے سے انکار کیا جارہا ہے ۔

 نجی ٹی وی 92نیوز کے مطابق پولیس حکام نے موقف اپنایا ہے کہ قانون کے مطابق سپیکر اسمبلی کی اجازت کے بغیر اراکین کو گرفتا رنہیں کیا جا سکتا ،مقدمے میں نامزد اراکین کو اس قانون کے متعلق آگاہ کردیا گیا ہے،اپوزیشن اراکین اپنی مرضی سے تھانے کی حدود میں موجود ہیں۔

متحدہ اپوزیشن کے اراکین کی جانب سے آج گرفتاری دینے کا فیصلہ کیا گیا تھا او ر یہ اراکین گرفتاری دینے کے لئے ہوسٹل سے تھانہ بجلی گھر پیدل آئے تھے۔ گرفتاری کے لئے جانے سے قبل گفتگو کرتے ہوئے اراکین کا کہنا تھا کہ ہم بے روز گاری کا خاتمہ چاہتے ہیں، شعبہ صحت اور تعلیم میں کرپشن کرنے والے ذمہ داروں کو سزا کیوں نہیں دی گئی، جام کمال حکومت فاشسٹ او ر غیر جمہوری ہے،ہمارے حوصلے بلند ہیں اس لئے گرفتاریاں دینے جائیں گے۔ ہماری گرفتاری سے غیر آئینی حکومت کا خاتمہ ہوگا۔

واضح رہے کہ بلوچستان اسمبلی میں جس روز صوبائی بجٹ پیش کیا جانا تھا اس دن متحدہ اپوزیشن کے اراکین کی جانب سخت احتجاج کیا گیا تھا اور اراکین نے اسمبلی کے چاروں دروازوں کو تالے لگا کر بند کردیاتھا۔ احتجاج کے دوران وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال کو جوتا مارنے کی کوشش بھی کی گئی، صوبائی حکومت کی جانب سے اس ہنگامہ آرائی پر متحدہ اپوزیشن اراکین کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا۔

مزید :

قومی -سیاست -علاقائی -بلوچستان -کوئٹہ -