میں طالبان کا نہیں ، پاکستان کا ترجمان ہوں، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی 

میں طالبان کا نہیں ، پاکستان کا ترجمان ہوں، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی 
میں طالبان کا نہیں ، پاکستان کا ترجمان ہوں، وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی 

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن ) وفاقی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ میں طالبان کاترجمان نہیں ہوں پاکستان کاترجمان ہوں،طالبان کومیری ترجمانی کی ضرورت نہیں ہے ان کے اپنے ترجمان موجودہیں،پاکستانی قوم کے مستقبل کے ساتھ سیاست نہیں کرسکتے،وزیراعظم عمران خان نے صاف کہاہے کہ ہم امریکا کو افغانستان میں کارروائی کے لئے ہوئی اڈے نہیں دیں گے مگرایک طبقہ اپنی ناکامیوں سے فرارچاہتاہے اور طرح طرح کے الزامات لگاتا ہے۔

پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ افغانستان میں قیام امن کیلئے تمام فریقین سے ملاقاتیں کیں،سار ی دنیاافغانستان کے مسئلے کے حل کے لئے مذاکرات کی حامی ہے۔ الزام تراشی سے مسئلے کوفائدہ نہیں پہنچے گا اسے مل بیٹھ کر ہی حل کرنا ہوگا۔

 وزیر خارجہ نے کہا کہ طالبان پرپاکستان کے اثرکاتاثربڑھاچڑھاکرپیش کیاجاتاہے،پاکستان طالبان کوڈکٹیٹ نہیں کرسکتاقائل کرسکتاہے،پاکستان نے مذاکرات میں تعطل ختم کرنے اورانٹراافغان مذاکرات کیلئے طالبان کومذاکرات کی میزپرلانے کیلئے قائل کیا۔ اگر افغانستا ن کے حالات 90کی دہائی کے ہوگئے تو اس سے صرف افعانستان نہیں پاکستان کا بھی نقصان ہوگا، ہمارے ملک میں 30لاکھ کے قریب افغان مہاجرین نے پناہ لے رکھی ہے حالات خراب ہونے کی صورت میں اس تعداد میں اضافہ ہو جا ئے گا۔ 

ان کا کہنا تھا کہ امریکہ نے افغان فوج کی تربیت کیلئے انفراسٹرکچربنایا اور20سال میں اپنے اہداف حاصل کرلیے ہیں،امریکہ چاہتاتھاکہ یورپ اورامریکہ پرافغانستان سے د ہشتگردانہ کارروائی نہ ہو،امریکہ کی کارروائیوں سےداعش،القاعدہ کی کمرٹوٹ گئی۔طالبان امریکہ مذاکرات میں طے پایاکہ افغان زمین ان کےخلاف استعمال نہیں ہوگی۔افغان قیادت کاکہناہے اب وہ اپنادفاع کر نے کے قابل ہیں،امریکہ کی دونوں سیاسی جماعتیں افغان مسئلے پراتفاق رکھتی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ بھارت کے پانچ اگست کے اقدامات جنیواکنونشن کےخلاف تھے،کشمیر رہنماﺅں فاروق عبداللہ،عمرعبداللہ اورمحبوبہ مفتی سمیت کسی نے ان اقدامات کونہیں مانااوریکسرمستردکردیا،5اگست کے اقدامات پاکستان نے بھی فور ی مستردکرد ئیے تھے،بھارت کی جانب سے24جون کااجلاس غیرمعمولی عمل ہے۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -