سویڈن میں سیاسی بحران شدت اختیار کر گیا 

سویڈن میں سیاسی بحران شدت اختیار کر گیا 
سویڈن میں سیاسی بحران شدت اختیار کر گیا 

  

 سٹاک ہوم (حافظ محمد عمران) سویڈن کی پارلیمنٹ نے وزیراعظم سٹیفن لوفین کےخلاف بھاری اکثریت سے تحریک عدم اعتماد منظور کر لی ہے جس کے بعد سٹیفن لوفین اپنی وزات عظمیٰ کی کرسی سے محروم ہو گئے ہیں۔

 تفصیلات کے مطابق سویڈن کی پارلیمینٹ میں ہونے والے ایک اہم اجلاس میں سویڈن کی چھوٹی لیکن اہم سیاسی جماعت لیفٹ پارٹی کی جانب سے وزیراعظم سٹیفن لوفین کےخلاف عدم اعتماد کی تحریک پیش کی گئی ۔ سویڈش حکومت کی پارلیمنٹ میں اتحادی جماعت لیفٹ پارٹی کی جانب سے ملک میں گھروں کے کرایوں میں اضافہ پرنئے قانون کی تیاری کے حوالے سے معاملات طے نا پانے پر وزیراعظم کے خلاف پارلیمنٹ میں عدم اعتماد کی تحریک پیش کی۔ وزیراعظم کےخلاف ہونے والی عدم اعتماد کی تحریک میں پارلیمنٹ کی تمام سیاسی جماعتوں کے ارکان نے حصہ لیا اور سویڈش وزیراعظم کے حق میں 109 اور مخالفت میں 181 ارکان پارلیمنٹ نے ووٹ ڈالے- اس طرح سٹیفن لوفین کو سویڈن کی پارلیمنٹ نے وزات اعظمی کی کرسی  سےمحروم کردیا ہے- سویڈش وزیراعظم کےخلاف ہونے والی عدم اعتماد کی تحریک میں 51 ارکان پارلیمنٹ نے پارلیمنٹ میں موجودگی کے باوجود اپنے رائے دہی کا اظہار نہیں کیا جبکہ آٹھ ارکان پارلیمنٹ  سے غیر حاضر رہے۔ سویڈن کی سیاسی تاریخ میں سٹیفن لوفین پارلیمنٹ سے عدم اعتماد کا ووٹ لینے والے پہلے وزیر اعظم بن گئے ہیں۔ دوسری جانب سویڈش وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کامیاب ہونے پر سویڈن کی سب سے بڑی حزب اختلاف کی سیاسی جماعت اعتدال پسند کے سربراہ الف کرسٹنسن نے ملک میں نئے انتخابات کےامکان کو رد کرتے ہوئے پارلیمنٹ میں بیٹھے اپنے سیاسی اتحادیوں سے نئی حکومت بنانے کا اعلان کر دیا ہے- اعتدال پسند کے سربراہ الف کرسٹنسن کا یہ بھی کہنا ہے کہ اگر ملک میں نئے انتخابات ہوتے ہیں تو وہ اس کے لئے بھی تیار ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -