بنگلہ دیش، حرکت الجہاد کے سربراہ کے لیے سزائے موت کی تصدیق

بنگلہ دیش، حرکت الجہاد کے سربراہ کے لیے سزائے موت کی تصدیق

  



ڈھاکہ(این این آئی)بنگلہ دیشی سپریم کورٹ نے ممنوعہ عسکریت پسند تنظیم حرکت الجہاد کے سابق سربراہ مفتی حنان کو سنائی گئی سزائے موت کے خلاف دائر کردہ اپیل مسترد کر دی ہے۔ اب حنان کو پھانسی دیے جانے کی راہ میں کوئی رکاوٹ باقی نہیں بچی۔میڈیارپورٹس کے مطابق حرکت الجہاد نامی عسکریت پسند تنظیم کو ملکی حکومت نے 2005میں ممنوع قرار دے دیا تھا۔ اس شدت پسند گروہ کے سابق سربراہ مفتی حنان کو موت کی سزا 2004ء میں بنگلہ دیش میں اس وقت کے برطانوی ہائی کمشنر پر کیے جانے والے ایک دستی بم حملے کے جرم میں سنائی گئی تھی۔

مفتی حنان اپنی گرفتاری کے وقت حرکت الجہاد کا سربراہ تھا اور برطانوی سفیر پر گرینیڈ حملے کے جرم میں اسے اور اس کے دو قریبی ساتھیوں کو ایک ملکی عدالت نے سزائے موت کا حکم سنایا تھا۔ ڈھاکا میں بنگلہ دیشی سپریم کورٹ کے ایک تین رکنی اپیل بینچ نے مفتی حنان اور اس کے دو ساتھیوں کی طرف سے دائر کردہ سزائے موت کے خلاف جو اپیل مسترد کر دی، اس کے بعد اب ان تینوں عسکریت پسندوں کو پھانسی دیے جانے کی راہ میں مزید کوئی قانونی رکاوٹ باقی نہیں بچی۔

مزید : عالمی منظر


loading...