خواجہ سرائوں کو ہراساں کرنے پر 2سال قید،جرمانہ کی تجویز

خواجہ سرائوں کو ہراساں کرنے پر 2سال قید،جرمانہ کی تجویز
خواجہ سرائوں کو ہراساں کرنے پر 2سال قید،جرمانہ کی تجویز

  



لاہور(ویب ڈیسک)پنجاب اسمبلی میں خواجہ سرائوں کے تحفظ کا بل جمع کرادیا گیا، بل میں خواجہ سرائو ں کو ہراساں کرنے اورامتیازی سلوک پر دوسال قید اورایک لاکھ روپے جرمانے کی سزا تجویز کی گئے ،خواجہ سرائو ں سے بھیک منگوانا بھی جرم ہوگا جبکہ دو ماہ قید اور تیس ہزار جرمانے کی تجویز دی گئی ۔

تحریک انصاف کی رکن اسمبلی ڈاکٹر نوشین حامد کی طرف سے پنجاب اسمبلی میں خواجہ سرائوں کے حقوق کے لئے جمع کرائے گئے بل میں تجویز کیاگیاہے کہ خواجہ سرائوں کے حقوق کے لئے قانون سازی کرنا ہوگی ۔ بل میں تجویز کیاگیاہے کہ خواجہ سرائوں کی فلاح و بہبود کے لئے صوبائی سطح پر و یلفیئر کمیٹی تشکیل دی جائے ،خواجہ سرائو ں کی بحالی کے لئے سنٹرزبنانے کی بھی تجویز دی گئی ہے ۔سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال کی زیرصدارت ہونے والے اجلاس میں سکھ رکن اسمبلی نے قومی مردم شماری کے فارم میں سکھ مذہب کا کالم شامل کرنے کامطالبہ کردیا ۔سکھ رکن اسمبلی سردار رامیش سنگھ اروڑہ نے ایوان میں معاملہ اٹھایا کہ مرد م شماری کے فارم میں پانچ مذاہب کو شامل کیاگیاہے مگر اس میں سکھ مذہب کاکالم شامل نہیں ہے ، سکھ برادری اس امر پر سراپا احتجاج ہے ۔

قصور ،ماں6سالہ ضدی بچے کو تھانے لے آئی،حوالات دیکھ کر روپڑا

رکن اسمبلی نے وفاقی حکومت سے مطالبہ کیاکہ اس ضمن میں فوری طورپر ہدایات جاری کرکے مردم شماری فارم میں سکھ مذہب کا خانہ شامل کیاجائے ۔ پنجاب اسمبلی کے ایوان میں اس وقت دلچسپ صورتحال پیدا ہوگئی جب تحریک انصاف کے فیصل آباد سے رکن اسمبلی خرم شہزاد نے الزام عائد کیاکہ مسلم لیگ ن کے سابق رکن اسمبلی خواجہ اسلام ایم پی اے کا جعلی لیٹر پیڈ بنواکر کمشنر اورڈپٹی کمشنر سے ترقیاتی سکیمیں منظور کروارہے ہیں ، خرم شہزاد نے مبینہ لیٹر پیڈ کی کاپیاں بھی ایوان میں لہر ادیں اور خواجہ اسلام کے خلاف اسمبلی میں تحریک استحقاق پیش کردی ۔وزیر قانون راناثنا اللہ کاکہناتھاکہ اگر خواجہ اسلام نے سابق ایم پی اے کی حیثیت سے سکیمیں منظور کروائی ہیں تو اس میں کوئی جرم نہیں لیکن اگر رکن اسمبلی کا لیٹر پیڈاستعمال کیا ہے تو پھر غلط ہے ۔ کورم پورا نہ ہونے پر اجلاس غیر معینہ مدت کے لئے ملتوی کردیا گیا۔

مزید : لاہور


loading...