تعلیم پر تربیت کا پہلو غالب ہونا چاہئے میڈیا منفی بات کو ہی خبر سمجھتا ہے, مثبت حقائق بھی دیکھے :انجینئربلیغ الرحمن

تعلیم پر تربیت کا پہلو غالب ہونا چاہئے میڈیا منفی بات کو ہی خبر سمجھتا ہے, ...
تعلیم پر تربیت کا پہلو غالب ہونا چاہئے میڈیا منفی بات کو ہی خبر سمجھتا ہے, مثبت حقائق بھی دیکھے :انجینئربلیغ الرحمن

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر مملکت برائے تعلیم انجینئربلیغ الرحمن نے کہا ہے کہ میڈیا منفی بات کو ہی خبر سمجھتا ہے مثبت حقائق کو بھی دیکھنا چاہیے ، تعلیم پر تربیت کا پہلو غالب ہونا چاہیے, بچوں کو کتا ب پڑھانے کی بجائے کتب بینی کی عادت ڈالنے کی ضرورت ہے.

معروف صحافی اور تجزیہ نگار  خورشید احمد ندیم کی کتاب ’’سماجیات‘‘ کی تقریب رونمائی سے خطاب کرتے ہوئے انجینئربلیغ الرحمن نے کہا ہے کہ تعلیم پر تربیت کا پہلو غالب ہونا چاہیے، دنیا گلوبل ویلج  بن چکی اور  آج کے بچے تیز ہو گئے ہیں،  علم تیزی سے پھیل رہا ہے، تربیت کی حامل کتب حکومتی ترجیحات میں شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ حکومت آئینی دائرے میں رہ کر کام کر رہی ہے ، ہم نے بین الصوبائی رابطہ کا فورم فعال کیا ہے ، اب تک 9  اجلاس کرائے جا چکے ہیں، صوبوں کا آن بورڈ کیا ہے، کم از کم تعلیمی معیارات بنائے ہیں، نصاب پرتمام صوبوں کو اکٹھا کرنے کی کوشش کی ہے، قومی نصاب کونسل بنائی ہے۔انہوں نے کہا کہ بچوں کو کتا ب پڑھانے کی بجائے کتب بینی کی عادت ڈالنے کی ضرورت ہے،  اس وقت نیٹ پر لغو باتوں کی بہتات ہے، ہمیں بچوں کی ایسی تربیت کرنے کی ضرورت ہے جس سے وہ نیٹ سے اچھی چیزیں لیں اور لغو چیزوں سے خود بچیں ۔

وزیر مملکت برائے تعلیم انجینئربلیغ الرحمن نے کہاکہ آج تعلیمی  اداروں میں سٹیزن شپ کی تعلیم دینے کی ضرورت ہے،سماجی رویے بہت اہمیت رکھتے اور  کردار سازی میں مدد دیتے ہیں، اس وقت دنیا برداشت کے ساتھ دوسرے کا نقطہ نظر سننے کی بات کرتی ہے، ہر فرقہ و مذہب کے لوگوں کا اپنا نقطہ نظر ہوتا ہے ، ہمیں اپنا ذہن وسیع رکھنا چاہیے ، میڈیا منفی بات کو ہی خبر سمجھتا ہے ، اسے دونوں طرف کا سوچناچاہیئے، تین سال میں سکول سے باہر بچوں کی تعداد 2 کروڑ 60  لاکھ سے کم کر کے 2 کروڑ 26  لاکھ ہوگئی ہے۔

مزید : اسلام آباد


loading...