ترکی نے بڑے اسلامی ملک میں فوجی اڈا بنانے کا اعلان کردیا، ایسا ملک کہ مغربی دنیا میں کھلبلی مچ گئی

ترکی نے بڑے اسلامی ملک میں فوجی اڈا بنانے کا اعلان کردیا، ایسا ملک کہ مغربی ...
ترکی نے بڑے اسلامی ملک میں فوجی اڈا بنانے کا اعلان کردیا، ایسا ملک کہ مغربی دنیا میں کھلبلی مچ گئی

  



انقرہ(مانیٹرنگ ڈیسک)شام میں داعش اور کرد جنگجوﺅں کے خلاف ترک افواج کی کارروائیاں اور جرمنی و نیدرلینڈ جیسے اہم یورپی ممالک کے ساتھ تنازعات ابھی زیربحث تھے کہ ترکی نے ایک بڑے اسلامی ملک میں فوجی اڈا قائم کرنے کا اعلان کر کے مغربی دنیا میں کھلبلی مچا دی ہے۔ آل افریقہ ڈاٹ کام کی رپورٹ کے مطابق ترکی یہ فوجی اڈا کئی دہائیوں کی خانہ جنگی سے تباہ حال افریقی ملک صومالیہ میں تعمیر کر رہا ہے۔ اس فوجی اڈے کا مقصد صومالیہ کی فوج کو پھر سے اپنے پاﺅں پر کھڑا کرنا ہے جہاں صومالی فوج کو ترک افسران تربیت فراہم کریں گے۔ یہ اڈہ صومالیہ کے دارالحکومت موغادیشو کے ایئرپورٹ کے قریب تعمیر کیا جا رہا ہے جو تکمیل کے قریب ہے اور اس کا افتتاح آئندہ ماہ متوقع ہے۔ افتتاحی تقریب میں ترک صدر رجب طیب اردگان، چیف جنرل آف جنرل سٹاف ہولوی اکار بھی شرکت کریں گے۔

بڑے اسلامی ملک پر اسرائیلی فوج کے پے در پے حملے، انتہائی خطرناک صورتحال پیدا ہوگئی

رپورٹ کے مطابق اس فوجی اڈے پر 5کروڑ ڈالر (تقریباً 5ارب روپے) لاگت آئی ہے۔ اس کا رقبہ990ایکڑ ہے جس میں ملٹری سکول، ڈپو و دیگر فوجی عمارات بنائی گئی ہیں۔ یہاں بیک وقت تقریباً 500فوجی اہلکار تربیت پا سکیں گے۔قبل ازیں ترک وزارت خارجہ کی ایک نمائندہ کا کہنا تھا کہ جب انہوں نے صومالیہ کا دورہ کیا تو دیکھا کہ صومالی فوجیوں نے مختلف رنگوں کے یونیفارم اور جوتے پہنچے ہوئے تھے، جو کہ انہیں خلیجی اور یورپی ممالک کی طرف سے عطیہ کئے گئے تھے۔ ان کا کہنا تھا کہ صومالیہ اس صورتحال پر قابو پانے کے لئے کوشاں ہے تاکہ ایک مرکزی کمانڈ کے تحت ایک متحد فوج قائم کی جاسکے، اور ترکی اس میں انہیں مدد فراہم کرے گا۔ واضح رہے کہ ترکی گزشتہ چند سالوں کے دوران صومالیہ کو 40 کروڑ ڈالر (تقریباً 40 ارب پاکستانی روپے) کی امداد بھی فراہم کرچکا ہے۔

مزید : بین الاقوامی


loading...