ایم ایم اے کی بحالی ملک و قوم کیلئے نیک شگون ہے،،شاہ اویس نورانی

ایم ایم اے کی بحالی ملک و قوم کیلئے نیک شگون ہے،،شاہ اویس نورانی

لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)جمعیت علماء پاکستان کے سیکریٹری جنرل اور متحدہ مجلس عمل کے ترجمان صاحبزادہ شاہ محمد اویس نورانی نے کہا ہے کہ ایم ایم اے کی بحالی ملک و قوم کے لئے نیک شگون ہے۔ متحدہ مجلس عمل کو بحال کر کے دینی ووٹ کو تقسیم ہونے سے بچا لیا ہے۔ دینی جماعتوں کا اتحاد انتخابی میدان میں سیکولر قوتوں کا ڈٹ کر مقابلہ کرے گا۔ انتخابی مہم کا لائحہ عمل تیار کر لیا ہے۔ چاروں صوبوں میں بڑے اجتماعات منعقد کر کے نظریاتی ووٹرز کو متحرک کریں گے اور نظام مصطفے کا پیغام گھر گھر پہنچائیں گے۔ ایم ایم اے کی بحالی سے امام نورانی کی روح خوش ہو گی۔ قوم سیکولر جماعتوں سے مایوس ہو کر دینی قوتوں کی طرف دیکھ رہی ہے۔ ہم قوم کو مایوس نہیں کریں گے۔ ایم ایم اے کی منزل نظام مصطفے کی حکمرانی ہے۔ ان خیالات کا اظہار انھوں نے ایم ایم اے کا ترجمان منتخب ہونے کے بعد میڈیا کو جاری کئے گئے اپنے بیان میں کیا ہے۔ صاحبزادہ شاہ اویس نورانی نے مزید کہا ہے کہ متحدہ مجلس عمل کے فعال ہونے سے ملک میں فرقہ وارانہ کشیدگی کا خاتمہ ہو گا اور مسلکی ہم آہنگی کو فروغ ملے گا۔ ایم ایم اے کسی بھی حکومت کی بی ٹیم نہیں بلکہ آذاد اور خود مختار سیاسی اتحاد ہے۔ کسی بھی پارٹی کے ساتھ اتحاد یا سیٹ ایڈجسٹمنٹ کا فیصلہ وقت آنے پر باہمی مشاورت سے کیا جائے گا۔ حلقہ بندیوں کی آڑ میں انتخابات کو ملتوی کرنے کی کوئی سازش کامیاب نہیں ہونے دیں گے۔ نگران سیٹ اپ کا فیصلہ کرنا وزیراعظم اور اپوزیشن لیڈر کا آئینی حق ہے اس میں کسی تیسری قوت کی مداخلت کا کوئی جواز نہیں۔ ایم ایم اے کے ترجمان نے مزید کہا کہ ریاست کی طرف بڑھتے خطرات کا کسی کو احساس نہیں ہے۔ خطے میں دہشت گردی کا خاتمہ پاک افغان تعاون سے ہی ممکن ہے۔ افغان صدر پاکستان کو بھارت کی آنکھ سے دیکھنا بند کرے۔ امریکہ افغانستان میں ناکامیوں کا ملبہ پاکستان پر ڈالنا چاہتا ہے۔ اقتصادی راہداری منصوبے کو کامیاب کرنے کے لئے قومی یکجہتی کی ضرورت ہے۔ متحدہ مجلس عمل مذہبی شدت پسندی کے خلاف آواز اٹھائے گی۔

مزید : میٹروپولیٹن 1