کرونا وائرس اور امریکی پابندیاں، ایران نے پاکستان سے مدد طلب کر لی

کرونا وائرس اور امریکی پابندیاں، ایران نے پاکستان سے مدد طلب کر لی

  



اسلام آباد (سٹاف رپورٹر،مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) کرونا وائرس کی تباہ کاریوں اور مسلسل خراب ہوتی صورتحال کے باعث ایران نے پاکستان سے مدد اور امریکی پابندیاں ہٹانے کیلئے کردار ادا کرنے کی درخواست کر دی ہے۔ایرانی صدر حسن روحانی کا وزیراعظم عمران خان کو خط۔، ایران پر عائد پابندیوں کے خاتمے کیلئے کردار ادا کرنے کی اپیل، پاکستان نے امریکا سے پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ کر دیا۔سفارتی ذرائع کے مطابق 14مارچ کو لکھے گئے خط میں پاکستان سے کرونا وبا کے تناظر میں امداد اور امریکی پابندیاں ختم کروانے کے لئے سفارتی کوششیں تیز کرنے کی درخواست کی گئی ہے۔ خط کے تناظر میں پاکستان نے امریکا سے پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے جب کہ پاکستان کی جانب سے ایران کو امداد بھیجنے پر غور بھی کیا جا رہا ہے۔وزیراعظم عمران خان نے 16 مارچ کو امریکی خبررساں ادارے کو دیئے گئے انٹرویو میں امریکا سے ایران پر عائد پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ کیا تھا، پاکستان ایران سے پابندیاں ہٹانے کے لئے خاموش سفارتکاری اور پبلک اسٹانس، دونوں کا سہارا لے رہا ہے۔دوسری طرف پاکستان میں ایران کے سفیر سید محمد علی حسینی نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے صدر قائد حزب اختلاف شہباز شریف کو خطلکھا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ کر رونا سے نمٹنے کے لیے ادویات، ضروری ساز و سامان درکار ہے،امریکی پابندیوں کی وجہ سے کرونا سے ایرانی عوام کو بچانے اور علاج معالجہ میں مشکلات پیش آرہی ہیں،اس وقت ایران میں کرونا سے ہونے والی اموات کی بنیادی وجہ ضروری سامان اور ادویات کی عدم فراہمی ہے،امریکی پابندیوں کی وجہ سے مالی وسائل استعمال کرنے میں رکاوٹیں ہیں،کورونا وائرس جغرافیے اور سرحدوں سے ماورا ہے،امریکی پابندیاں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قرارداد نمبر 2231 کی کھلی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہاکررونا سے درپیش سنگین صورت حال میں کسی قوم کو زندہ رہنے کے حق سے محروم کرنا انسانیت کے خلاف جرم ہے ،امریکی پابندیاں ایرانی قوم کے زندہ رہنے اور صحت کے حق کی سنگین خلاف ورزی ہے ،یہ پابندیاں بنیادی انسانی حقوق اور عالمی قانون کی خلاف ورزی ہے ،پاکستان سمیت تمام ہمسایہ ممالک کو مدد کے لئے خط لکھا ہے،قائد حزب اختلاف کو خط لکھنے کا مقصد ایران میں انسانیت کو لاحق خطرات سے آگاہ کرنا،اپوزیشن لیڈر ایران پر پابندیوں کو نرم کرنے کے حق میں آواز بلند کریں۔ شہباز شریف نے عالمی برادری پر زور دیا کہ ایرانی قوم کے زندہ رہنے اور علاج کے حق کو تسلیم کیا جائے،کررونا عالمی چیلنج ہے، تنازعات سے بالاتر ہوکر دیکھا جائے،کرونا وبا سے نمٹنے کے لئے عالمی، علاقائی اور ممالک کی سطح پر جامع حکمت عملی تیار کرنے کی ضرورت ہے،کرہ ارض کے تمام انسانوں کی زندگی بچانے کے لیے یکساں اصول اور حکمت عملی اپنائی جائے۔جبکہ ایران نے کرونا وائرس کی روک تھام کیلئے پاکستان سمیت دوست ممالک کی امداد پر اظہار تشکر کیا ہے ایرانی سفارتخانہ نے کہا ہے کہ کورونا کی روک تھام کے لئے پورے ملک کی انتظامی مشینری اور ہسپتال پوری توانائی کے ساتھ وائرس سے متاثرہ افراد کی شناخت اور علاج معالجہ میں سرگرم عمل ہیں،دوست ممالک چین، پاکستان، ترکی، جرمنی،فرانس، جاپان، قطر، آذربائیجان اور روس کی حمایت اور امداد بڑی حوصلہ افزاء اور امید کا باعث ہے،مخصوص حفاظتی لباس اور سامان کی قلت سے کورونا کے علاج پر مامور سٹاف کے متاثر ہونے کے خدشات روز بروز بڑھ رہے ہیں، ہسپتالوں میں کچھ ڈاکٹرز، نرسیں اور پیرامیڈیکل سٹاف مظلومانہ طور پر اس بیماری کا شکار بن چکے ہیں، امریکہ کی انتظامیہ نے ایران کے خلاف غیر ذمہ دارانہ اور یکطرفہ رویہ اپنایا ہے، دواؤں اور علاج معالجہ کے لیے ضروری آلات سے ایران کو محروم رکھ کر ایرانی عوام کا بنیادی حق صحت چھین لیا گیا ہے۔

ایران درخواست

مزید : صفحہ اول