وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا جرمن ہم منصب سے ٹیلیفونک رابطہ،ایسی بات کہہ دی کہ مودی سرکار تلملا اٹھے گی

وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا جرمن ہم منصب سے ٹیلیفونک رابطہ،ایسی بات کہہ دی ...
وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا جرمن ہم منصب سے ٹیلیفونک رابطہ،ایسی بات کہہ دی کہ مودی سرکار تلملا اٹھے گی

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا جرمن وزیر خارجہ ہیکو ماس سے ٹیلیفونک رابطہ،جرمنی میں کرونا وائرس کے باعث ہونیوالے جانی و مالی نقصان پراظہارتعزیت کیا،و زیرخارجہ شاہ محمودقریشی نےاپنےجرمن ہم منصب کو کرونا وبا سے نمٹنے کیلئے،پاکستان کی طرف سےاٹھائےجانے والے اقدامات سے آگاہ کیا،شاہ محمود قریشی نےجرمن وزیرخارجہ کومقبوضہ کشمیرمیں لاک ڈاؤن کےباعث کشمیری عوام کی مشکلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ بھارت کی جانب سے مسلسل کرفیو کے باعث، غذا اور ادویات کی شدید قلت پیدا ہو چکی ہے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے جرمن ہم منصب کو ٹیلیفون کیا اور ان سے جرمنی میں کرونا وائرس کے باعث ہونیوالے کثیر جانی و مالی نقصان پر تعزیت اور ہمدردی کا اظہار کیا ۔جرمن وزیر خارجہ سے گفتگو میں شاہ محمو قریشی کہنا تھا کہ کرونا وبا اس وقت پوری دنیا کیلئے بہت بڑا چیلنج بن چکی ہے ،اس چیلنج سے نبرد آزما ہونے کیلئے اقوام عالم کو مشترکہ کاوشیں بروئے کار لانا ہوں گی۔ وزیر خارجہ نے اپنے جرمن ہم منصب کو کرونا وبا کے تناظر میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں 8 ماہ سے جاری مسلسل کرفیو اور ہندوستان کی جانب سے انسانی حقوق پے در پے خلاف ورزیوں سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ مقبوضہ جموں کشمیر میں صورتحال انتہائی تشویشناک ہے،بھارت کی جانب سےمسلسل کرفیو کےباعث،غذااورادویات کی شدیدقلت پیدا ہو چکی ہے،اپنےمحدودذرائع کےساتھ اس وبا کے پھیلاؤ کو روکنے کیلئے جدوجہد کر رہے ہیں۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اس وقت کرونا وائرس پوری انسانیت کیلئے ایک چیلنج بن چکا ہے، ایران میں صورتحال انتہائی تشویشناک ہے، ایران میں کرونا وائرس سے متاثرہ افراد اور اس وائرس کے سبب ہونیوالی اموات کی تعداد خطے میں سب سے زیادہ ہے،اس صورت حال کے پیش نظر ضرورت اس امر کی ہے کہ ایران پر عائد معاشی پابندیوں کو فی الفور اٹھایا جائے تاکہ وہ اپنے وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے اس آفت کا مقابلہ کر سکیں۔ شاہ محمود قریشی نے اپنے جرمن ہم منصب سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان جیسے ترقی پذیر ممالک جو قرض کے بوجھ تلے دبے ہوئے ہیں اس وقت درپیش عالمی تناظر میں ان کو قرضوں کی ادائیگی میں ریلیف فراہم کیا جائے تاکہ وہ اپنے وسائل کو اس عالمی وبا کا مقابلہ کرنے کیلئے بروئے کار لا سکیں۔ جرمن وزیر خارجہ نے کہا کہ جرمنی میں اس وقت 20 ہزار سے زیادہ افراد کرونا انفیکشن سے متاثر ہو چکے ہیں اور اب تک 68 افراد لقمہ اجل بن چکے ہیں، ہمیں ایران کی صورت حال پر تشویش ہے۔جرمن وزیر خارجہ نے شاہ محمود قریشی کو یقین دلایا کہ وہ قرضوں کی ادائیگی میں ریلیف اور ایران پر عائد پابندیوں کو ہٹانے کا معاملہ اگلے ہفتے منعقد ہونے والی جی 7 وزرائے خارجہ کانفرنس اور یورپین یونین فارن منسٹرز کانفرنس میں اٹھائیں گے، دونوں وزرائے خارجہ نے اس صورت حال پر مشاورتی سلسلہ جاری رکھنے کا فیصلہ کیا۔

مزید : اہم خبریں /قومی