اے سی مانسہرہ تشدد کیس ، وزیر اعظم کے بھانجے حسان نیازی کا ایسا دعویٰ کہ سارا معاملہ ہی مشکوک ہو گیا

اے سی مانسہرہ تشدد کیس ، وزیر اعظم کے بھانجے حسان نیازی کا ایسا دعویٰ کہ سارا ...
اے سی مانسہرہ تشدد کیس ، وزیر اعظم کے بھانجے حسان نیازی کا ایسا دعویٰ کہ سارا معاملہ ہی مشکوک ہو گیا
سورس: Twitter

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

مانسہرہ (ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر اعظم عمران خان کے بھانجے اور انسانی حقوق کے وکیل حسان نیازی کا کہنا ہے کہ اسسٹنٹ کمشنر (اے سی) مانسہرہ نے عورت کارڈ کا استعمال  کرکے بے گناہوں کو پھنسایا۔

ٹوئٹر پر اپنے پیغام میں حسان نیازی نے کہا کہ موقع پر موجود لوگوں نے ایسے مضبوط شواہد پیش کیے ہیں جن سے  لگتاہے کہ اے سی مانسہرہ نے عورت کارڈ کا استعمال کیا۔  اے سی مانسہرہ عمران (ملزم) سے اس کے فون میں موجود ویڈیو ڈیلیٹ کروانا چاہتی ہے، یہ سادہ سا سڑک پر ہونے والا ایک جھگڑا تھا لیکن اس میں غلط طور پر عورت کارڈ کھیلا گیا ، اس معاملے کی تحقیقات سیشن جج کو کرنی چاہئیں۔

حسان  نیازی کے مطابق عمران کا فون لاک ہے اور اس وقت خیبر پختوا پولیس کوشش کر رہی ہے کہ عمران اے سی اور اس کے ڈرائیور کی ویڈیو ڈیلیٹ کردے۔ انہوں نے بتایا کہ عمران برطانیہ میں کام کرنے والا اوور سیز پاکستانی ہے جس کو ضلعی انتظامیہ ہراساں کر رہی ہے۔

خیال رہے کہ اے سی مانسہرہ ماروی شیر ملک کی درخواست پر تین افراد کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ تینوں ملزمان نے غازی کوٹ کے علاقے میں ان پر حملہ کیا اور ان کی تصاویر اور ویڈیوز بنائیں، ملزمان نے کہا کہ وہ کسی خاتون کو اے سی نہیں مانتے۔