زرداری ،اوباما ،ہیلری ملاقات ،نیٹوسپلائی کی بحالی کے بدلے معافی سمیت پاکستانی شرائط امریکہ کے حوالے

زرداری ،اوباما ،ہیلری ملاقات ،نیٹوسپلائی کی بحالی کے بدلے معافی سمیت ...
زرداری ،اوباما ،ہیلری ملاقات ،نیٹوسپلائی کی بحالی کے بدلے معافی سمیت پاکستانی شرائط امریکہ کے حوالے

  



شکا گو(مانیٹرنگ ڈیسک)شکاگو میں نیٹو کانفرنس کے دوسرے روز صدر آصف زرداری نے امریکی صدر براک اوباما اور وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن سے ملاقات کی جس میںنیٹو سپلائی کھولنے کے بدلے مطالبات کی فہرست پیش کر دی ہے۔صدر زرداری کی براک اوباما سے ملاقات میں پاک امریکہ تعلقات سمیت متعدد امور زیربحث آئے۔ غیرملکی میڈیا کے مطابق اس سے پہلے امریکی صدر اوباما نے صدر زرداری سے ملاقات سے انکار کر دیا تھا۔ صدر کی امریکی وزیر خارجہ سے ملاقات میں نیٹو سپلائی کا معاملہ زیر بحث رہا۔ امریکی میڈیا کے مطابق صدر زرداری نے ہلیری کلنٹن سے سلالہ واقعے پر معافی کا مطالبہ دہرایا اور ڈرون پالیسی تبدیلی کرنے پر زور دیا۔ غیر ملکی میڈیا کے مطابق اوباما انتظامیہ کو امید تھی کہ صدر زرداری کانفرنس میں نیٹو سپلائی کھولنے کا اعلان کریں گے تاہم وزیر خارجہ ہلیری کلنٹن سے ملاقات میں صدر زرداری نے سپلائی کھولنے کے بدلے مطالبات کی فہرست پیش کر دی۔ میڈیا کے مطابق صدر زرداری کی جانب سے پیش کردہ مطالبات میں نیٹو کے ہر ٹرک کے بدلے ملنے والا معاوضہ دوگنا کرنے کی شرط بھی شامل تھی۔ امریکی صدر براک اوباما نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان کے لیے سپلائی روٹ بہت اہمیت کا حامل ہے افغان فورسز ذمہ داریاں سنبھالنے کے قابل ہو چکی ہیں۔ صدر اوباما نے کہا کہ اسٹریٹیجک معاہدہ افغانستان کو اپنے پاو¿ں پر کھڑا کر دے گا۔ اس سے قبل نیٹو کے سیکرٹری جنرل راسموسین نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ افغانستان میں 2014 تک ایساف کے آپریشن ختم کر دیئے جائیں گے۔

مزید : قومی /اہم خبریں