امریکہ سمیت کسی ملک نے بھی ایگزیکٹ کے جعلی ڈگری سکینڈل کے حوالے سے تحفظات کا اظہار نہیں کیا:خلیل اللہ قاضی

امریکہ سمیت کسی ملک نے بھی ایگزیکٹ کے جعلی ڈگری سکینڈل کے حوالے سے تحفظات کا ...
امریکہ سمیت کسی ملک نے بھی ایگزیکٹ کے جعلی ڈگری سکینڈل کے حوالے سے تحفظات کا اظہار نہیں کیا:خلیل اللہ قاضی

  

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک)ترجمان دفتر خارجہ خلیل اللہ قاضی نے کہاہے کہ امریکہ سمیت کسی ملک نے بھی پاکستانی آئی ٹی کمپنی ایگزیکٹ کے جعلی ڈگری سکینڈل کے حوالے سے کسی قسم کے تحفظات کا اظہار نہیں کیاہے۔

ترجمان دفترخارجہ نے ہفتہ وارمیڈیا بریفنگ دیتے ہوئے پاکستان اور افغانستان کی خفیہ ایجنسیوں آئی ایس آئی اور افغانستان کی نیشنل ڈائریکٹوریٹ آف سیکیورٹی کے درمیان ہونے والے معاہدے کی تصدیق بھی کر دی ہے ۔

ترجمان دفترخارجہ خلیل اللہ قاضی نے ’سنڈے ٹائمز‘میں شائی ہونے والی رپورٹ کو بنیاد قراردیتے ہوئے کہا کہ پاکستان اور سعودی عرب کے درمیان کوئی ایمٹی معاہدہ نہیں ہورہا ،پاکستان ایک ایٹمی ملک کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریوں سے آگاہ ہے اور ہمار اایمٹی پروگرام پاکستان کی سیکیورٹی کیلئے ہے ااور پاکستان ایٹمی عدم پھیلاﺅ کے مقاصد کاحامی ہے ۔

ا ن کا کہناتھا کہ نیویارک ٹائمز کے ایگزیکٹ پر الزامات کے بعد وزارت داخلہ کی ہدایت پر پاکستانی سیکیورٹی ایجنسیاں تحقیقات کر رہی ہیں اس لیے ہمیں ایگزیکٹ کے بارے میں تحقیقات مکمل ہونے کا انتظار کرنا چاہیے ۔ قاضی خلیل اللہ کا کہنا تھا کہ ہندوستان کے ساتھ مذاکرات کاعمل تاحال بحال نہیں ہوا تاہم اس حوالے سے کوششیں جاری ہیں کیونکہ 'ہمسایہ ممالک کے ساتھ بہتر تعلقات پاکستان کی خارجہ پالیسی کا حصہ ہیں'۔

مزید : قومی