ضروری نہیں عدالت ڈنڈا پکڑے تو حکم مانا جائے ،ہائی کورٹ میں ڈی جی ایل ڈی اے کی سرزنش ،چیف ٹاﺅن پلانر کو گرفتار کرکے پیش کردیاگیا

ضروری نہیں عدالت ڈنڈا پکڑے تو حکم مانا جائے ،ہائی کورٹ میں ڈی جی ایل ڈی اے کی ...
ضروری نہیں عدالت ڈنڈا پکڑے تو حکم مانا جائے ،ہائی کورٹ میں ڈی جی ایل ڈی اے کی سرزنش ،چیف ٹاﺅن پلانر کو گرفتار کرکے پیش کردیاگیا

  

لاہور (نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے قرار دیا ہے کہ کیا اب افسروں کو جیل بھیجنا شروع کر دیں، یہ ضروری تو نہیں کہ عدالتیں ڈنڈا پکڑیں تب ہی عدالتی احکامات پر عمل درآمد ہو.مسٹر جسٹس فرخ عرفان خان نے یہ ریمارکس عدالتی حکم کے باوجود ایل ڈی اے کے ڈائریکٹر جنرل احد چیمہ کو گرفتار کرکے پیش نہ کرنے پر اظہار ناراضی کرتے ہوئے دیئے ۔
گزشتہ روز ایل ڈی اے کے چیف ٹاﺅن پلانر محمد اکرم کو گرفتار کرکے عدالت میں پیش کر دیا گیا جبکہ ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ عدالت میں پیش نہیں ہوئے تاہم عدالت کے سخت نوٹس لینے کے بعد احد چیمہ پیش ہوگئے عدالت نے ریمارکس دیئے کہ ڈی جی ایل ڈی اے تو عام شہریوں کی پہنچ سے باہر ہیں،عدالت میں غنی گلاس فیکٹری کی توہین عدالت درخواست پر سماعت شروع ہوئی تو چیف ٹاﺅن پلانر ایل ڈی اے اکرم چیمہ کو گرفتار کر کے عدالت میں پیش کیا گیا اور ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ کی عدم حاضری پر ایل ڈی اے کے وکلاءنے غیر مشروط معافی طلب کی تا ہم عدالت نے غیر مشروط معافی کی استدعا مسترد کرتے ہوئے قرار دیا کہ سرکاری افسران عدالتی احکامات کو ردی کی ٹوکری میں پھینک دیتے ہیں، عدالت نے چیف ٹاﺅن پلانر محمد اکرم کے گزشتہ سماعت پر پیش نہ ہونے پر ریمارکس دیئے کہ آپ لاٹ صاحب لگے ہوئے ہیں جو عدالتی حکم پر پیش نہیں ہوئے، آپ کو تو عوام کی خدمت کرنی چاہئے آپ عوام کے خادم ہیں اور اسی کام کی تنخواہ آپ کو دی جاتی ہے. عدالتی استفسار پر متعلقہ تھانہ کے پیروی افسر نے بتایا کہ عدالتی نوٹس ڈی جی ایل ڈی اے کو پہنچائے تھے تا ہم وہ آفس میں موجود نہیں تھے . ایل ڈی اے کے وکیل نے پیروی افسر کے بیان کی تائید کرتے ہوئے کہا کہ اس روز ڈی جی ایل ڈی اے اسلام آباد گئے ہوئے تھے جس پر عدالت نے ریمارکس دیئے کہ یہ کیسا ڈی جی ایل ڈی اے ہے جو اسلام آباد رہتا ہے، انہیں سی ڈی اے جوائن کر لینا چاہئے , ایل ڈی اے کو لاہور میں کام کرنے والا ڈی جی چاہئے. ایل ڈی اے کے وکیل وقار اے شیخ نے استدعا کی کہ درخواست کی سماعت ملتوی کر دی جائے آئندہ سماعت پر ڈی جی ایل ڈی اے پیش ہو جائیں گے، عدالت کو بتایا گیا کہ ہائیکورٹ نے مسلسل عدم پیشی پر وزیر اعلیٰ کو ڈی جی ایل ڈی اے کے خلاف کارروائی کا حکم دے رکھا ہے .
عدالت نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ سرکاری افسروںنے عدالتوں کو مذاق بنایا ہوا ہے،عدالت نے ڈی جی کے خلاف کارروائی کا حکم دے رکھا ہے مگر اس کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی جاتی، کیا اب افسروں کو جیل بھیجنا شروع کر دیں، یہ ضروری تو نہیں کہ عدالتیں ڈنڈا پکڑیں تب ہی عدالتی احکامات پر عملدرآمد ہو، عدالتوں کی طاقت ان کے فیصلے اور احکامات ہیں انہی پر عملدرآمد کرنے سے عدالتوں کی عزت ہے. ڈی جی ایل ڈی اے تو عام لوگوں کی پہنچ سے باہر ہے، عدالت نے ڈی جی ایل ڈی اے کو فوری پیش ہونے کا حکم دیا تاہم عدالتی وقت ختم ہونے کے بعد ڈی جی ایل ڈی اے احد چیمہ پیش ہوئے، جس پر عدالت نے غنی گلاس فیکٹری کی زرعی اراضی کو کمرشل کرنے کی توہین عدالت درخواست کی سماعت 25مئی تک ملتوی کرتے ہوئے ڈی جی ایل ڈی اے احد خان چیمہ اور چیف ٹاﺅن پلانر محمد اکرم کو دوبارہ پیش ہونے کا حکم دے دیا۔

مزید : لاہور