پی پی اور پی ٹی آئی کا کاکردگی کے میدان میں ن لیگ سے کوئی مقابلہ نہیں : عابد شیر علی

پی پی اور پی ٹی آئی کا کاکردگی کے میدان میں ن لیگ سے کوئی مقابلہ نہیں : عابد ...

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،این این آئی) وفاقی وزیر مملکت پانی و بجلی عابد شیر علی نے کہا ہے کہ 100 روزہ پلان دینا نگران حکومت کا کام ہے،ملک کو خسارے اور قرضوں کی دلدل میں دھکیلنے والے دھرنانیازی کو قذافی سٹیڈیم میں کلرک کی نوکری بھی نہیں ملے گی،نیازی اور100 لوٹے ملکر بھی مسلم لیگ(ن) کا راستہ نہیں روک سکتے، پانچ سال سے ایمپائر کی انگلی اٹھنے کا نتظار کرنیوالے دھرنا خاں کے نصیب میں رو نا دھونا لکھا ہے ،لو ٹوں اور مفاد پرستوں کو ساتھ ملا کر نیازی نے پی ٹی آئی کے کا رکنوں کے ساتھ بھی مذاق کیا ہے، پی ٹی آئی میں سارے لوٹے اکھٹے کئے جارہے ہیں اور لوٹوں کی سنچری مکمل کرکے نااہل ترین شخص سے سنچری پلان کا اعلان کروایا گیا۔ ایک انٹر ویو میں عابد شیر علی نے کہا کہ عمران خان اور ان کی جماعت کا جاگتی آنکھوں کیساتھ آئندہ حکومت بنانے کے خواب دیکھنا اچھی علامت نہیں ، زمینی حقائق کے مطابق تو عمران خان وزیر اعظم بن نہیں سکتے لیکن اگر وہ رہنماؤں کے منہ سے خود کو وزیرا عظم کہلوا کر تسکین حاصل کررہے ہیں تو کسی کو کیا اعتراض ہو سکتا ہے۔پی ٹی آئی اور پیپلز پارٹی کاکارکردگی کے میدان میں مسلم لیگ (ن) سے کوئی مقابلہ نہیں، اس لئے دونوں جماعتیں سازشوں میں مصروف ہیں۔ انشا اللہ آئندہ عام انتخابات میں خیبر پختوانخواہ اور سندھ میں بھی حکومت بنائیں گے اور پورے ملک میں پنجاب کی طرح ترقی ہو گی ۔ پی ٹی آئی کی مقبولیت کے مصنوعی غبارے سے جلد ہوا نکلے گی اور وہ وقت دور نہیں جب ٹکٹوں کی تقسیم کے معاملے میں جوتیوں میں دال بٹے گی ۔ اسد عمر نے 2013 کا الیکشن جیتنے کے بعد کبھی اپنے حلقے کا رخ ہی نہیں کیا،بنی گالہ کو علیحدہ ریاست کا درجہ دینے والے اورشیشے کے محلوں میں رہنے والے کچے جھونپڑوں اور کچی آبادیوں کے مکینوں کے دکھ درد کیا جانیں؟ پی ٹی آئی کی قیادت کے چہرے بے نقاب ہو چکے ہیں ، 2018کے عام انتخابات میں ملک کے غیور عوام اس جماعت کو ووٹ دینگے جس نے ملک سے اندھیرے اور دہشت گردی ختم کرکے ملک امن قائم کیا،روشیناں بحال کیں، پاکستان کوترقی و خوشحالی کی شاہراہ پر گامزن کیا۔تحریک انصاف نے ’ ’را ،،اور’’این ڈی ایس،، کے اشاروں پر ناچنے والوں کوساتھ ملانے کا اعلان کرکے اپنی حب الوطنی کا پول کھول دیا ہے،ہم پورے30 روزے رکھیں گے اور پانچ سالہ پلان دیں گے، ۔ باشعور عوام پی ٹی آئی کی قیادت کے منفی سیاست کے ایجنڈے کو سمجھ چکے ہیں،نئے صوبوں کا نعرہ لگاکر ووٹ لینے کیلئے عوام کو جھانسہ دینے والے پہلے کیا کرتے رہے ہیں جتنی پارٹیاں ان لوگوں نے بدلی ہیں اتنے صوبے کیوں نہیں بناسکے؟ کوئی غلط فہمی میں نہ رہے آئندہ الیکشن مین مسلم لیگ(ن) دوتہائی اکثریت سے کا میاب ہو گی۔تحریک انصاف کے اعلان کردہ100 روزہ پلان پر تبصرہ کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے مزیدکہا کہ جو لوگ اپنے گھر کو نہیں سنبھال سکتے ،ایسے لوگ پہلے انتشار پھیلاتے اور پھر شارٹ کٹ کے چکر میں اقتدار کی طرف منہ کرکے کھڑے رہتے ہیں،،یہ لوگ پہلے فیصلہ کریں کہ ان کا وزیراعظم کا امیدوار کون ہوگا؟شاہ محمود قریشی،عمران نیازی،اسد عمر یا پھر کوئی اور ؟

عابد شیر علی

مزید : علاقائی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...