آپ کی کامیابی کا انحصار دوسروں کی مدد پر ہے

آپ کی کامیابی کا انحصار دوسروں کی مدد پر ہے
آپ کی کامیابی کا انحصار دوسروں کی مدد پر ہے

  

مصنف:ڈاکٹر ڈیوڈ جوزف شیوارڈز

قسط:74

لوگوں سے متعلق صحیح سوچیں

کامیابی حاصل کرنے کیلئے ایک بنیادی اصول ہے۔ آئیں اس اصول کو ہم اپنے ذہن میں نقش کر لیں۔ یہ اصول ہے: ”آپ کی کامیابی کا انحصار دوسروں کی مدد پر ہے“ آپ میں اور آپ کی کامیابی کے درمیان صرف ایک رکاوٹ ہے، وہ ہے دوسروں کی مدد۔

اس بات کو ہم اس طرح واضح کرتے ہیں ایک افسر اپنے ماتحتوں کو ہدایات دے کر ان کی مدد سے کام کی تکمیل کرتا ہے۔ ایک سیلز مین دوسرے لوگوں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ اس کا مال خریدیں۔ اگر لوگ اس کا مال نہیں خریدیں گے تو وہ ناکام ہو جائے گا۔ اسی طرح کالج کا ڈین اپنے پروفیسروں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ اس کے تعلیمی پروگرام کو آگے بڑھائیں۔ ایک سیاست دان ووٹروں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ اسے منتخب کریں، ایک ادیب بھی لوگوں پر انحصار کرتا ہے کہ وہ جو کچھ لکھے لوگ اسے پڑھیں۔

تاریخ میں کئی بار ایسے بھی ہوا ہے کہ کوئی شخص طاقت کے زور پر حکومت پر قابض ہو گیا، لیکن اسے بھی اپنے ساتھیوں کی مدد درکار ہوتی ہے یا پھر وہ ہر وقت خطرے میں رہتا ہے۔

لیکن یاد رکھیں؟ آج کل کسی کی مدد اس کی مرضی کے بغیر حاصل نہیں کی جا سکتی۔ اب تو یہ پوچھنا پڑتا ہے کہ مجھے کامیابی کی منزل تک پہنچنے کیلئے آپ کی مدد کی ضرورت ہے، کیا آپ میری مدد کریں گے؟ تو ہمیں ان لوگوں کی مدد حاصل کرنے کیلئے کیا کرنا چاہیے کہ وہ ہماری لیڈرشپ کو قبول کر لیں؟ اس کا جواب صرف ایک فقرے میں ہے: کیا آپ لوگوں سے متعلق صحیح سوچتے ہیں؟ لوگوں سے متعلق اچھا سوچیے وہ آپ کو پسند کریں گے اور آپ کی مدد کریں گے۔ دنیا میں روزانہ کہیں نہ کہیں بہت سی جگہوں پر اجلاس بلائے جاتے ہیں۔ ایسے اجلاسوں میں کچھ نہ کچھ ضرور زیرغور ہوتا ہے جیسے کسی کی ترقی، نئی ملازمت، طلب کی ممبرشپ، کسی ادارے کی سربراہی وغیرہ وغیرہ۔

کمیٹی کے سامنے نام ہوتا ہے اور چیئرمین ممبران سے پوچھتا ہے کہ آپ اس کے بارے میں کیا رائے دیتے ہیں؟ تو کہا جاتا ہے یہ اچھا شخص ہے لوگ اس کے بارے میں اچھی رائے رکھتے ہیں، اس کی پہلے کارکردگی بھی بہت اچھی تھی، پھر کہا جاتا ہے میرا خیال ہے یہ اس کام کیلئے مناسب رہے گا۔

کچھ ناموں کو منفی کردار کی وجہ سے رد کر دیا جاتا ہے۔ کچھ کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ ہمیں اس کے بارے میں بہت محتاط ہو کر اس کے بارے میںمعلومات حاصل کرنی چاہیے۔ لگتا ہے لوگ اس کے بارے میں اچھے خیالات نہیں رکھتے۔

کچھ کے بارے میں کہا جاتا ہے: ہاں مجھے معلوم ہے اس کی تعلیم بہت اچھی ہے، اس کی ٹیکنیکل بیک گراﺅنڈ بھی بہتر ہے، لیکن لوگ اس کی زیادہ عزت نہیں کرتے۔ اہمیت کی قدر کچھ اس طرح ہے:

دس میں سے نو معاملات میں ”لوگ کسی کو کس قد رپسند کرتے ہیں؟“ سب سے پہلے یہی بات دیکھی جاتی ہے۔ یہ وجہ تقریباً تمام معاملات میں سب سے زیادہ اہمیت رکھتی ہے۔

اس بات کو یونیورسٹی کے پروفیسروں کو منتخب کرتے وقت سب سے زیادہ اہمیت دی جاتی ہے اس کے بعد تجربے کو اہمیت دی جاتی ہے۔ جب کسی فرد کا نام کسی عہدے کیلئے منتخب کیا جاتا ہے تو سب سے پہلا سوال یہی کیا جاتا ہے کیا وہ اس عہدے پر موزوں رہے گا؟ کیا طلباءاسے پسند کرتے ہیں؟ کیا وہ دوسرے ساتھیوں کے ساتھ تعاون کرے گا؟ اگر طلباءاسے پسند نہیں کرتے تو اس کی تعلیم وغیرہ کی کوئی اہمیت نہیں ہوتی۔( جاری ہے ) 

نوٹ : یہ کتاب ” بُک ہوم “ نے شائع کی ہے ( جُملہ حقوق محفوظ ہیں )۔

مزید :

ادب وثقافت -