جنرل راحیل شریف نے اس طریقے سے تاریخ بدل دی کہ کسی نے سوچا بھی نہ تھا، مونچھوں والے پہلے جنرل بن گئے جس نے ۔ ۔ ۔

جنرل راحیل شریف نے اس طریقے سے تاریخ بدل دی کہ کسی نے سوچا بھی نہ تھا، مونچھوں ...
جنرل راحیل شریف نے اس طریقے سے تاریخ بدل دی کہ کسی نے سوچا بھی نہ تھا، مونچھوں والے پہلے جنرل بن گئے جس نے ۔ ۔ ۔

  


لاہور (نعمان تسلیم) جنرل راحیل شریف نے جب سے پاک فوج کی کمان سنبھالی ہے انہوں نے ماضی کی کئی روایات کو تبدیل کیا ہے، دہشت گردوں کو کیفرکردار تک پہنچانے کا معاملہ ہو یا آپریشن ضرب عضب، انہوں نے ہر موقع پر اپنے عہدے کاپاس رکھا ۔ پاکستان بننے کے بعد 4 بار ایسے مواقع آئے جب فوج نے سیاسی قیادت کو مختلف الزامات کی وجہ سے ایک طرف کرکے اقتدار سنبھالا، ایک بار تو ایسا بھی ہوا کہ وطن عزیز میں مارشل لاء لگانے کی بالکل بھی ضرورت نہ تھی لیکن پھر بھی اس ملک نے مارشل لاء کو جھیلا۔راحیل شریف کے آرمی چیف بننے کے بعد ایسے مواقع بھی آئے کہ وہ بآسانی اقتدار پر قبضہ کرسکتے تھے۔ دھرنے کے دنوں میں جب ہر شخص کا خیال تھا کہ اب پاک فوج ضرور اقتدار سنبھال لے گی لیکن صرف جنرل راحیل شریف کی ثابت قدمی کی وجہ سے ایسا نہ ہوا اور آج ہم جمہوریت سے لطف اندوز ہورہے ہیں۔ یہ بات دلچسپی سے خالی نہیں ہے کہ ماضی میں جتنے بھی مارشل لاءلگے، آرمی چیف مونچھوں والے تھے جنرل ایوب خان، جنرل یحییٰ خان، جنرل ضیاءالحق اور جنرل پرویز مشرف کی مونچھیں تھیں۔ جب جنرل راحیل شریف کو آرمی چیف نامزد کیا گیا تو سوشل میڈیا ایسی پوسٹوں سے بھرگیا جن میں یہ واضح اشارہ تھا کہ اب ضرور مارشل لاءلگے کیونکہ مونچھوں والا جنرل آچکا ہے تاہم یہ تمام باتیں کچھ دیوانوں کا خواب ہی رہیں۔ جنرل راحیل سے قبل جنرل اشفاق پرویز کیانی مونچھ منڈے تھے لیکن راحیل شریف نے مونچھیں ہونے کے باوجود کسی بھی قسم کی مہم جوئی سے اجتناب کیا اور تاریخ بدلتے ہوئے مارشل لاء والی روایت کو یکسر تبدیل کردیا ہے۔امید کی جانی چاہیے کہ ان کے بعد والے آرمی چیف چاہے وہ کوئی بھی ہوں، اس روایت کی پاسداری کریں۔

مزید : قومی /اہم خبریں