کویت میں 7300 سال پرانی ایسی چیز دریافت کہ دیکھ کر ماہرین بھی چکرا کر رہ گئے، دنیا کی تاریخ بدل گئی

کویت میں 7300 سال پرانی ایسی چیز دریافت کہ دیکھ کر ماہرین بھی چکرا کر رہ گئے، ...
کویت میں 7300 سال پرانی ایسی چیز دریافت کہ دیکھ کر ماہرین بھی چکرا کر رہ گئے، دنیا کی تاریخ بدل گئی

  


کویٹ سٹی (مانیٹرنگ ڈیسک) خطہ عرب اپنی قدیم ترین مذہبی و ثقافتی تاریخ کی وجہ سے تو شہرت رکھتا ہی تھا لیکن کویت کے شمالی علاقے میں اب ایک ایسی چیز کی دریافت بھی ہوگئی ہے کہ جسے آثار قدیمہ کی تاریخ کے ایک اہم ترین باب میں شمار کیا جارہا ہے۔

ویب سائٹ مسلم پریس کی رپورٹ کے مطابق شمالی علاقے الصابیہ میں انسانی انگلیوں کے قدیم ترین نشانات دریافت ہوئے ہیں اور ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ فنگر پرنٹ کم از کم 7300 سال پرانے ہیں۔ الصابیہ میں بحراہ کے مقام پر آثار قدیمہ کی کھدائی کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ فنگر پرنٹ چکنی مٹی سے بنے ہوئے ایک برتن کے ٹکڑے پر ملے ہیں جو تقریباً 8700 قبل مسیح سے 2000 قبل مسیح کے دور سے تعلق رکھتا ہے۔

’ ایک نوجوان لڑکی جس نے پوری سعودی مملکت کو ہلاکر رکھ دیا ‘

یہ دریافت اسی علاقے میں قبل ازیں ہونے والی کچھ اہم دریافتوں کے سلسلے کی تازہ ترین کڑی ہے۔ اس سے پہلے یہاں ایک قدیم شہر، ایک عبادت گاہ، قبرستان، قدیم ترین دور کے برتن اور پانی کے کنویں دریافت ہوچکے ہیں۔ انسانی تاریخ کے قدیم ترین فنگر پرنٹ کی دریافت کرنے والی ٹیم میں متعدد ممالک کے ماہرین شامل ہیں۔ 17 افراد پر مشتمل تحقیق کاروں کی ٹیم میں پولینڈ کے 11، کویت کے 5 اور امریکہ کا ایک سائنسدان شامل ہے۔

سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ اہم ترین دریافتوں کے پیش نظر اقوام متحدہ کے ادارے یونیسکو سے بات چیت جاری ہے تاکہ بحراہ کے مقام کو عالمی ثقافتی ورثے کی فہرست میں شامل کیا جائے۔ اس ضمن میں یونیسکو کی ایک ٹیم ڈاکٹرمحمد بوزیان کی قیادت میں علاقے کا دورہ بھی کرچکی ہے۔

مزید : عرب دنیا