"بلبل بیت اللہ" چھ ماہ بعد واپس لوٹ آئے، اذان دے کر روحوں کو گرما دیا

"بلبل بیت اللہ" چھ ماہ بعد واپس لوٹ آئے، اذان دے کر روحوں کو گرما دیا

  



مدینہ منورہ (غلام نبی مدنی) آپ نے بیت اللہ اور موبائلوں میں خوبصورت آواز میں دی جانے والی اذان تو سنی ہوگی؟ لیکن اذان دینے والے شخص کے بارے میں بہت کم لوگ ہی جانتے ہیں،آئیے آج آپ کو دنیا کے اس عظیم مؤذن سے ملواتے ہیں۔

یہ ہیں شیخ علی احمد ملا جو 40 سال سے بیت اللہ میں اذان دے رہے ہیں۔وہ حرم مکی کے تمام مؤذنوں میں سب سے سینئر اور سب کے انچارج ہیں۔ یہی نہیں شیخ علی احمد ملا کا خاندان برسوں سے بیت اللہ میں اذان دے رہا ہے، ان کے دادا، والداور چچا بیت اللہ میں اذان دینے کی سعادت حاصل کرچکے ہیں جبکہ اب ان کے بیٹے شیخ عبداللطیف بھی حرم میں اذان دیتے ہیں۔

’ہرشہری سے یہ کام زبردستی کرواﺅ‘سعودی مفتی اعظم نے بھی نوجوانوں کی بھرتی کی تائید کردی

شیخ علی احمد ملا گزشتہ چھ ماہ سے بیماری کی وجہ سے بیت اللہ میں اذان نہیں دے رہے تھے، علاج بعد وہ اتوار کو واپس بیت اللہ میں اور اذان دی۔امام کعبہ شیخ عبدالرحمن السدیس سمیت سعودی عرب کے عوام نے شیخ علی احمد ملا کی واپسی پر انہیں خراج عقیدت پیش کیا اور ان کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار کیا۔

شیخ احمد علی ملا کی اذان دنیا بھر میں مشہور ہے۔

سعودی عرب میں مقدس مقامات پر زمین کے نیچے ایسی شاندار چیز بنانے کا فیصلہ کرلیا گیا کہ جان کر ہر مسلمان عش عش کراُٹھے

خوبصورت آواز میں دی جانے والی ان کی اذان دنیا بھر کے لوگوں کے موبائلوں میں بھی گونجتی ہے۔خوبصورت آواز کی وجہ سے انہیں "بلبل بیت اللہ" اور "بلال ثانی" کے لقب سے بھی پکارا جاتاہے۔شیخ احمد علی ملا کی آواز میں بیت اللہ کے اذان دینے والے مخصوص کمرے سے دلوں کو گرما دینے والی خوبصورت آذان آپ بھی سنیں اور ایمان تازہ کریں۔

مزید : عرب دنیا