قومی اسمبلی ، نیپر میں اصلاحات کا بل منظور ، سرچارج لگانے کا حکومتی اختیار مسترد

قومی اسمبلی ، نیپر میں اصلاحات کا بل منظور ، سرچارج لگانے کا حکومتی اختیار ...

اسلام آباد (آئی این پی) قومی اسمبلی نے توانائی کے شعبہ میں اصلاحات اور نیپرا ایکٹ میں ترمیم کے حوالے سے برقی توانائی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کو ریگولیٹ کرنے کا (ترمیمی)بل 2017کی کثرت رائے سے منظوری دے دی،حکومتی ارکان کی تعداد کم ہونے کی وجہ سے سبکی کا سامنا کرنا پڑا، توانائی کے حوالے سے ترقیاتی منصوبوں کے لئے حکومت کو سرچارج لگانے کا اختیار دینے والی شق کو ارکان نے کثرت رائے سے مسترد کر دیا جبکہ وزیر توانائی سردار اویس لغاری نے کہا ہے کہ بل کے تحت نیپرا ایکٹ میں ترمیم اور توانائی کے شعبہ میں اصلاحات کیلئے انقلابی اقدامات اٹھائے گئے ہیں، بجلی کے صارفین سے زائد بلوں کے اجراء میں ملوث آفیسران کو 3سال تک سزا ہو سکے گی، ملک میں اربوں روپے کی زائد بلنگ کی جاتی ہے، توانائی کی پالیسی مشترکہ مفادات کونسل سے منظوری لی جائے گی، نیپرا کو مضبوط کیا جا رہا ہے، غلط بلوں کی تحقیقات کا اختیار نیپرا کو دیا جائے گا، حکومت اور نیپرا کے اختیارات کا واضح تعین کیا جا رہا ہے۔ اپوزیشن کے ارکان سید نوید قمر، شاہ محمود قریشی، شیریں مزاری اور دیگر نے بل کو عجلت میں منظور کرانے پر حکومت پر شدید تنقید کی۔پیر کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں وزیر توانائی سردار اویس لغاری نے برقی توانائی کی پیداوار، ترسیل اور تقسیم کو منضبط کرنے کا (ترمیمی)بل 2017ایوان میں پیش کیا۔ پیپلز پارٹی کے رہنما سید نوید قمر نے کہا کہ یہ اہم بل ہے اور اس کی 51شقیں ہیں، اس کو آج ہی ایوان میں پیش کر کے کیوں پاس کرایا جا رہا ہے، بغیر پڑے بل منظور کرانا اسمبلی کی توہین ہے۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ ہم اصولی طور پر بل کی حمایت کرتے ہیں لیکن حکومت اچھے کام کو بھونڈے انداز میں کیوں کر رہی ہے، حکومت عجلت کا مظاہرہ نہ کرے، بل پڑھنے کیلئے ارکان کو وقت دیا جائے۔ اویس لغاری نے کہا کہ یہ بل نیپرا ایکٹ میں ترمیم اور توانائی کے شعبہ میں اصلاحات کے حوالے سے ہے، بل کو قائمہ کمیٹی نے متفقہ طور پر منظور کیا ہے اور مکمل غور کے بعد تیار کیا گیا ہے، بل کے تحت صارفین کیلئے اووربلنگ سے بچانے کیلئے اقدامات کئے گئے ہیں، غریب بجلی کے صارفین کو اوور بلنگ سے چھٹکارا ملے گا اور اووربلنگ میں ملوث آفیسران کے خلاف تین سال تک سزا ہو گی، بل میں تاخیر کی صورت میں صارفین متاثر ہوں گے، ملک میں اربوں روپے کی اووربلنگ کی جات یہے، بل کو منظور کیا جائے، بل کے تحت توانائی پالیسی کی مشترکہ مفادات کونسل سے منظوری لی جائے گی، اویس لغاری نے کہا کہ اگر ارکان کو اس شق کی سمجھ نہیں آرہی تو اس شق کو فی الحال ڈراپ کر دیں، باقی شقیں منظور کی جائیں۔ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ میں نے کہا تھا کہ بھونڈے انداز میں نہ کرائیں، ڈپٹی سپیکر نے پھونڈے انداز کے الفاظ حذف کرا دیئے۔ اس کے بعد ڈپٹی سپیکر نے شق 40پر ووٹنگ کرائی جس کو ارکان نے مسترد کر دیا، اس کے بعد باقی شقوں کی ایوان نے منظوری دی، ایوان نے بل کو کثرت رائے سے ترامیم کے ساتھ منظور کر لیا۔

نیپرا بل

مزید : صفحہ آخر