حضور نبی اکرمؐ پر ہما ری آل اولاد قربان ، ختم نبوتؐ پر ایمان زندگی کا حاصل ، مسئلے پر سیاست نہ کی جائے

حضور نبی اکرمؐ پر ہما ری آل اولاد قربان ، ختم نبوتؐ پر ایمان زندگی کا حاصل ، ...
 حضور نبی اکرمؐ پر ہما ری آل اولاد قربان ، ختم نبوتؐ پر ایمان زندگی کا حاصل ، مسئلے پر سیاست نہ کی جائے

  

لاہور(جاوید اقبال) مختلف سیاسی اور مذہبی جماعتوں کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ دھرنے ہر مسئلے کا حل نہیں ہیں حکومت اور مذہبی جماعتیں ختم نبوت ؐپر ترجیحی بنیادوں پر مسئلے کا حل نکالیں۔ختم نبوت پر ایمان ہی ہماری زندگی کا حاصل ہے اس کے بغیر ایمان مکمل نہیں ہوتا وہ ایشو آف دی ڈے میں پاکستان سے گفتگو کر رہے تھے۔اس حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر مملکت طلال چوہدری نے کہا کہ حضور پر ہماری آل اولاد قیادت اور پوری پارٹی قربان ہے اس مسئلے پر جو لوگ سیاست کر رہے ہیں انہیں ایسا نہیں کرنا چاہیے ۔پارلیمنٹ میں جو غلطیاں ہوئی انہیں درست کر لیا ہے اور قانون میں ترمیم کے اندر جو غلطی کی گئی اس کو درست کر لیا گیا ہے اور ذمہ داروں کے تعین کیلئے کمیٹی بھی بنا دی گئی ہے۔جیسے ہی کمیٹی کی رپورٹ آئے گی کارروائی ہو گی اور اس سلسلے میں پارٹی کے سربراہ نواز شریف کی واضح ہدایات موجود ہیں خلق خدا کیلئے مسائل پیدا کرنے سے آپؐ نے منع کر رکھا ہے مذہبی جماعتوں نے وفاق میں کئی روز سے دھرنا دے کر لوگوں کی زندگی اجیرن بنائے ہوئے ہیں جب مسئلہ ہی حل ہو گیا ہے تو دھرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا مذہبی جماعتیں نہ ہی عدالتوں کا حکم مان رہی ہیں اور نہ ہی خدا کا ۔ہم دھرنے والوں پر طاقت کا استعمال نہیں چاہتے در حقیقت ان کے پیچھے نواز شریف کے دشمنوں کا ہاتھ ہے اور تحریک انصاف،مسلم لیگ (ق)ان کی پشت پناہی کر رہی ہیں۔

طلال چودھری

لاہور(جنرل رپورٹر)مسلم لیگ (ق) کے مرکزی رہنما چوہدری مونس الٰہی نے ایشو آف دی ڈے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اسلام آباد میں آئے روز دھرنے حکومتی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہیں اسلام آباد میں مذہبی جماعتوں کا دھرنا جائز ہے اور ہم اس کی حمایت کرتے ہیں حکومت اگر ختم نبوت کے قانون میں ترمیم کی ساتھی نہیں تھی تو اس کے ذمہ داروں کو اب تک سامنے کیوں نہیں لا رہی۔انہوں نے کہا کہ حکومت کو اس کی غلطیاں لے ڈوبی ہیں پہلے عوام کو مسائل کی دلدل میں پھینسایا اب ختم نبوت پر بھی باز نہیں آئی یہ اللہ کی پکڑ میں ہیں انہیں ضرور حساب دینا ہو گا اگر ذمہ داران کو فارغ کرکے حکومت کی جان چھوٹتی ہے تو اسے چھڑا لینی چاہیے۔انہوں نے کہا کہ کئی روز سے دھرنا جاری ہے مگر حکومت کے کان پر جوں تک نہیں رینگ رہی اصل میں ملک میں حکومت نام کی کوئی چیز نظر ہی نہیں آ رہی۔

مونس الٰہی

لاہور(نمائندہ خصوصی) پاکستان تحریک انصاف کے مرکزی رہنما اعجاز چودھری نے ’’روز نامہ پاکستان ‘‘کے مقبول عام سلسلے ایشو آف دی ڈے میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہا ہے کہ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ جب آج سے 43سال قبل ذوالفقار علی بھٹو کے دور حکومت میں اس وقت کی اسمبلی نے ختم نبوت ؐکے ایشو کو حل کردیا تھا تو پھر آج اس وقت جب پاکستان کے وزیر خارجہ امریکہ اور یورپ کے دورے پر تھے عین اسی وقت پاکستان کی اسمبلی میں اس پر ترمیم کیوں کی گئی ہمیں تواس پر کوئی سازش نظر آرہی ہے اور خود حکومت نے بھی اس پر ایک کمیٹی قائم کی تھی کہ جس نے بھی یہ سازش یا غلطی کی ہے اس کو سامنے لایا جائے گا حکومت بتائے کہ اس رپورٹ کو عوام کے سامنے کیوں نہیں لایا جارہا ۔انہوں نے کہا کہ اگر اسلام آباد میں دھرنا ہورہا ہے تو اس کے ذمے دار حکمران ہیں اگر دھرنا والوں کے خلاف طاقت کا استعمال کیا گیا تو وہ درست نہ ہو گا اور ہم حکومت کے ایسے ممکنہ روئیے کی ابھی سے مذمت کرتے ہیں ۔

اعجازچودھری

مزید : صفحہ اول