قبائلیوں کی 10دسمبر تک ایف سی آر ختم نہ کرنے پر اسلام آباد مارچ کی دھمکی

قبائلیوں کی 10دسمبر تک ایف سی آر ختم نہ کرنے پر اسلام آباد مارچ کی دھمکی

باجوڑ ایجنسی ( نمائندہ پاکستان)10 دسمبر تک اگر ایف سی آر ختم نہ کیا گیا تو اسلام آباد تک مارچ کریں گے۔قبائلی عوام کی ترقی کیلئے این ایف سی ایوارڈ میں 7 فیصد حصہ مختص کیا جائے ۔ افغان بارڈر مینجمنٹ کے سلسلے میں پاک فوج کیساتھ مکمل تعاون کی یقین دہانی۔تفصیلات کے مطابق باجوڑ پریس کلب میں جماعت اسلامی نے پریس کانفرنس کا انعقاد کیا جس میں امیر فاٹا حاجی سردار خان ،امیر باجوڑ قاری عبد المجید ،محمد حمید صوفی ،حاجی صاحب الرحمان سمیت دیگر عہدیداروں اور جمعیت طلبہ کے اراکین نے شرکت کی اپنے خطاب میں حاجی سردار خان نے کہا کہ موجودہ حکومت ایف سی آر کے خلاف نوے فیصد قبائلی عوام کے آواز کو دبا دیتی ہیں جس سے موجودہ حکومت کی جمہوریت پر یقین رکھنے کے دعوے محض دکھاوا ہے اُنہوں نے کہا کہ مرکزی حکومت اگر 10 دسمبر تک تمام قبائلی علاجہ جات سے ایف سی آر کو مکمل طور پر ختم کرنے کا اعلان نہیں کرتی تو اسلام آباد کے طرف مارچ کرینگے اُنہوں نے کہا کہ این ایف سی ایوراڈ میں قبائل کو 3 فیصد حصہ دینا ظلم و ذیادتی ہے ہم قبائلی عوام کے تعمیر و ترقی کیلئے 7 فیصد حصے کا مطالبہ کرتے ہیں اُنہوں نے کہا کہ مارچ کا آغاز باب خیبر سے کیا جائے گا اور اور اس کیساتھ پشاور ،پبی ،نوشہرہ اور صوابی کے پریس کلبوں میں احتجاج بھی ریکارڈ کیا جائے گا اُنہوں نے تمام سیاسی جماعتوں ،فاٹا یوتھ کے تنظیموں کو جماعت اسلامی کیساتھ اس مارچ میں شرکت کرنے کا مطالبہ کیا کانفرنس سے خطاب میں امیر باجوڑ قاری عبد المجید نے کہا کہ سیکیورٹی اداروں نے پاک افغان بارڈر منیجمنٹ کا جو فیصلہ کیا ہے جماعت اسلامی اس اقدام کی مکمل حمایت کرتی ہے کیونکہ اس قسم کے اقدامات سے پائیدار امن قائم ہو سکتا ہے اُنہوں نے بارڈر پرشہید ہونے والے سیکیورٹی فورسز کے جوانوں کو خراج تحسین پیش کیا ۔

مزید : کراچی صفحہ اول

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...