بچوں کا عالمی دن منانے کا مقصد ان کا بہتر تعلیم و تربیت ہمارا فرض ہے :اسد قیصر

بچوں کا عالمی دن منانے کا مقصد ان کا بہتر تعلیم و تربیت ہمارا فرض ہے :اسد قیصر

پشاور( سٹاف رپورٹر)سپیکر خیبر پختونخوا اسمبلی اسد قیصر نے کہا ہے کہ بچوں کا عالمی دن منانا ہمیں یاد دلاتا ہے کہ بچے ہمارا قیمتی اثاثہ ہیں۔ان کی حفاظت ،بہتر تربیت اور مناسب تعلیم ہمارا فراض ہے ۔صوبائی حکومت نے نادار ،غریب اور سٹریٹ چلڈرن کی تعلیم وتربیت کیلئے ناساپہ پشاور میں ایک فلاحی تعلیمی ادارہ قائم کیا ہے ۔جہاں سٹریٹ چلڈرن کو مفت بورڈ نگ ،کھانا پینا اور ماہانہ وظیفہ بھی دیا جاتا ہے ۔انہوں نے ان خیالات کا اظہار پرل کانٹیننٹل ہوٹل پشاور میں بچوں کے عالمی دن منانے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔تقریب سے ڈپٹی سپیکر ڈاکٹر مہرتاج روغانی نے بھی خطا ب کرتے ہوئے ،معزز مہمانان گرامی انتظامیہ اور میڈیا کاشکریہ ادا کیاجنہوں نے اس حساس معاملے کو اجا گرکرنے میں اپنا کردار ادا کیا ۔سپیکر نے کہا کہ صوبائی حکومت اپنی ذمہ داریوں سے آگاہ ہے اور بچوں کی فلاح وبہبود کیلئے بھر پور اقدامات کررہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ نوزائیدہ بچوں کی بہتر نگہداشت ماں کی کود میں ہی احسن طریقے سے ممکن ہے لہٰذا ماں کی بہتر صحت اور تندرستگی اتنی ہی ضروری ہے جتنا اس کے بچے کی صحت ونشونما۔والدین کا گھر ہی بچے کی بہترین تربیت گاہ ہے ۔خاندان کے سارے افراد مل کر اس کو پر سکون بناسکتے ہیں ۔اسی طرح محکمہ صحت،تعلیم اور پبلک ہیلتھ انجینئرنگ کی ذمہ داریوں میں شامل ہے کہ بچے کی صحت ،تعلیم اور صفائی کے مناسب انتظامات ہوں ۔انہوں نے کہا کہ بچوں کے حقوق کی پاسداری ان کی ضروریات سے زیادہ اہم ذمہ داری ہے ۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ ماں کی کوکھ سے لے کر فضاؤں میں ایک کامیاب انسان کی اڑان تک کے سفر میں ہم سب اپنا اپنا فرض احسن طریقے سے مکمل ہم آہنگی کے ساتھ نبھاتے رہیں گے ۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے نادار اور اسٹریٹ چلڈرن کی تعلیم وتربیت کیلئے پشاور کے قریب ناساپہ میں ایک معیاری تعلیمی ادارہ قائم کیا ہے جہاں پر مذکورہ بچوں کو مفت تعلیم وتربیت رہائش ،کھانا پیناسمیت ماہانہ وظیفہ بھی دیا جاتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ہمارا فوکس سوشل سیکٹر کو ترقی سے ہمکنار کر نا ہے ۔سپیکر نے کہا کہ صوبائی حکومت تعلیم اور صحت کو اپنی ترجیحات میں اولیت دے رہی ہے ۔انہوں نے کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت نے تاریخ میں پہلی مرتبہ کل بجٹ کا 28فیصد تعلیم کے فروغ کیلئے مختص کیا ۔آج پرائمری سکول کو دوکمروں سے بڑھا کر چھ کمروں پر مشتمل بنا دیا گیا ہے گورنمنٹ سکولوں میں ماحول اور تعلیمی معیار میں بہتری لائی گئی ہے جس سے والدین اپنے بچوں کو پرائیویٹ سکولوں سے نکال کر گورنمنٹ کے سکولوں میں داخل کروارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے تعلیم اور صحت کے شعبوں میں انقلابی اقدامات کئے ہیں۔حکومت نے ساڑھے چار ہزار ڈاکٹر بھر تی کئے جبکہ تین ہزار دو سو ڈاکٹروں کو مستقل کیا گیا ۔اب عوام کو دور دراز پسماندہ علاقوں میں بھی ڈاکٹر کی سہولت دستیاب ہے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت عوام کا معیار زندگی بلند کرنے کے لئے مختلف اقدامات کر رہی ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...