پاکستان زرعی شعبے میں چین کی مہارت سے فائدہ اٹھائے نائب صدر چینی سب کیمیکل کونسل

پاکستان زرعی شعبے میں چین کی مہارت سے فائدہ اٹھائے نائب صدر چینی سب کیمیکل ...

  



 لاہور(کامرس ڈیسک) پاکستان کا زرعی شعبہ ملکی معیشت مستحکم کرنے میں بنیادی کردار کرسکتا ہے مگر اس کے لیے جدید ٹیکنالوجی اور ترقی یافتہ ممالک بالخصوص چین کے ساتھ اشتراک ضروری ہے۔ ان خیالات کا اظہار لاہور چیمبر کے صدر عرفان اقبال شیخ، سینئر نائب صدر علی حسام اصغر، نائب صدر میاں زاہد جاوید احمد، چائنا کونسل برائے فروغ تجارت کی سب کونسل برائے کیمیکل کی نائب صدر ما چنیان، لاہور چیمبر کی سٹینڈنگ کمیٹی برائے زراعت کے کنوینر انجینئر جاوید سلیم قریشی، سٹینڈنگ کمیٹی برائے سی اے سی کے کنوینر محمد ندیم قریشی، محمد اظہر علی، ڈاکٹر محمد اشفاق، آصف مجید، ڈاکٹر انجم علی بھٹر، جمشید اقبال چیمہ اور دیگر ماہرین نے اس موقع پر خطاب کیا۔ میڈم ماچنیان نے کہا کہ سی اے سی پاکستان نے عالمی برادری کی توجہ اپنی طرف مبذول کرائی ہے، چین نے زراعت سمیت دیگر شعبوں میں تیزی سے ترقی کی ہے جس سے پاکستان کو بھی مستفید ہونا چاہیے، سی اے سی پاکستان اس سلسلے میں اہم کردار ادا کررہی ہے۔ لاہور چیمبر کے صدر عرفان اقبال شیخ نے کہا کہ کم زرعی پیداوار، خوراک کی بڑھتی طلب، پوسٹ ہارویسٹ نقصانان اور جدید ٹیکنالوجی کے معاملات پر خصوصی توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ خوراک کی بڑھتی ہوئی طلب زرعی شعبے میں کیمیکلز کے استعمال کی حوصلہ افزائی کررہی ہے، اس سلسلے میں خاص توجہ برتنے کی ضرورت ہے تاکہ صحت اور ماحول کو نقصانات نہ ہوں۔ نہوں نے کہا کہ پاکستان میں کیڑے مارادویات کی صنعت کے فروغ کی وسیع گنجائش ہے۔ لاہور چیمبر کے سینئر نائب صدر علی حسام اصغر اور نائب صدر میاں زاہد جاوید احمد نے کہا کہ سی اے سی پاکستان ایک بہت اہم ایونٹ ہے جو دونوں مالک کے درمیان مزید منصوبہ سازی کی راہ ہموار کرے گا۔ انجینئر جاوید سلیم نے سی اے سی پاکستان کے اغراض و مقاصد پر تفصیل سے روشنی ڈالی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں ایگروبیسڈ کیمیکلز انڈسٹری کے فروغ کی بہت گنجائش ہے جس سے فائدہ اٹھانا چاہیے۔ محمد ندیم قریشی نے کہا کہ ہر سال پاکستان میں سی اے سی نمائش و سمٹ منعقد کرنے کا مقصد زرعی شعبے کو مستحکم کرنا اور نئی ٹیکنالوجیز متعارف کروانا ہے۔ تمام ماہرین اس نکتہ پر متفق تھے کہ پاکستان کا زرعی شعبہ معیشت کی ریڑھ کی ہڈی ہے، یہ جی ڈی پی اور روزگار کی فراہمی میں بہت اہم کردار ادا کررہا ہے۔ ماہرین نے زرعی شعبے کے متعلق پریزنٹیشنز بھی دیں۔

مزید : کامرس