پاکستان میں بڑھتے ہوئے پولیو کیسز کے پس پردہ سیاسی نااتفاقی:عالمی ادارہ صحت

پاکستان میں بڑھتے ہوئے پولیو کیسز کے پس پردہ سیاسی نااتفاقی:عالمی ادارہ صحت

  



لاہور،اسلام آباد(این این آئی) صحت کے عالمی فورم پر پاکستان کے سیاسی مسائل کو موضوع بحث لاتے ہوئے بین الاقوامی مانیٹرنگ بورڈ نے کہا ہے کہ ملک میں پولیو پروگرام اور انسداد پولیو ویکسین دینے کا عمل سیاسی فٹ بال بن چکا ہے۔آئی ایم بی وہ ادارہ ہے جو عالمی سطح پر پولیو کا پھیلا روکنے کیلئے گلوبل پولیو ایریڈیکیشن انیشی ایٹوکی کارکردگی کا آزادانہ جائزہ لیتا ہے، جس کے مطابق پاکستان میں پولیو میں اضافے کے پسِ پردہ سیاسی نا اتفاقی ہے۔نجی ٹی وی کی رپورٹ کے مطابق اپنی تازہ رپورٹ میں آئی ایم بی کا کہنا تھا کہ 2018کے اوائل میں پاکستان کا پولیو پروگرام پولیو وائرس کے پھیلا کو روکنے کے دہانے پر تھا۔تاہم صرف ایک سال کے عرصے کے دوران ملک میں اس بیماری کی صورتحال نے پولیو کا پھیلا روکنے والے عالمی پروگرام کے اندازوں کو الٹ کر رکھ دیا۔اب تک ملک میں 88 پولیو کیسز سامنے آچکے ہیں، گزشتہ برس 12 جبکہ 2017 میں صرف 8 کیسز رپورٹ ہوئے تھے۔ان 88 کیسز میں سے 64 خیبرپختونخوا، 10 سندھ، 7 بلوچستان اور 5 کیسز کا تعلق پنجاب سے ہے۔آئی ایم بی نے ستمبر 2019 کی انسداد پولیو مہم پر بھی سخت تحفظات کا اظہار کیا جس میں بچوں کی سب سے بڑی تعداد ویکسینیشن سے محروم رہی۔اس ضمن میں نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے وزارت صحت کے عہدیدار نے کہا کہ پولیو کے مسئلے پر قابو پانے کے لیے نئی حکمت عملی تیار کی گئی ہے، جس میں پولیو پروگرام کے سابق سربراہ کی دوبارہ تعیناتی بھی شامل تھی۔

پولیوویکسین 

مزید : علاقائی