احتساب عدالت،نیب شہباز شریف کیخلاف وعدہ معاف گواہ بننے کیلئے دباؤ ڈال رہا ہے:ملزم وسیم اجمل

احتساب عدالت،نیب شہباز شریف کیخلاف وعدہ معاف گواہ بننے کیلئے دباؤ ڈال رہا ...

  



لاہور(نامہ نگار)احتساب عدالت نے لاہور ویسٹ مینجمنٹ کمپنی میں ایک ارب سے زائد کرپشن کے کیس میں گرفتارسابق ایم ڈی وسیم اجمل کو 10 روزہ جسمانی ریمانڈ پر نیب کے حوالے کرنے کاحکم دے دیاہے،عدالت نے ملزم وسیم اجمل کو 30 نومبر کو دوبارہ عدالت میں پیش کرنے کا حکم دیاہے۔گزشتہ روز کیس کی سماعت شروع ہوئی۔ نیب کے تفتیشی افسر نے بتایا کہ سابق وزیراعلیٰ پنجاب میاں شہباز شریف کے حکم پر خواجہ احمد حسان کی سربراہی میں سب کمیٹی بنائی گئی، عدالت نے پوچھا کہ کیا اس کی دستاویزات موجود ہیں؟جس پر تفتیشی افسر نے کہا جی اس سب کمیٹی کی دستاویزات موجود ہیں، 26 اپریل 2014 کو کمیٹی کی میٹنگ ہوئی۔ نیب کے پراسیکیوٹر نے کہا کہ البیراک ترکش کمپنی ہے، میاں شہباز شریف نے ان سے معاہدہ کیا، عدالت نے پوچھا کہ پھر اس میں حکومت کو نقصان کیا ہوا؟نیب کے پراسیکیوٹر نے کہا کہ حکومت کو ٹھیکوں کی مد میں سوا ارب روپے کا نقصان ہوا، دوران سماعت سابق ایم ڈی وسیم اجمل نے عدالت کے روبرو کہا کہ نیب والے میاں شہباز شریف کے خلاف وعدہ معاف گواہ بننے کے لئے ان پردباؤ ڈال رہے ہیں، نیب کے تفتیشی مجھے ہر میٹنگ میں سابق وزیراعلیٰ پنجاب کے خلاف گواہ بننے کے لئے دباؤ ڈالتے رہے،صاف پانی کمپنی میں بھی نیب نے یہی دباؤ ڈالا تھا، سارا ریکارڈ نیب کے پاس موجود ہے،صرف وعدہ معاف گواہ بننے کے لئے دباؤ ڈالا جارہاہے، صاف پانی میں میرے خلاف کوئی کیس نہیں تھا، 2، اڑھائی سال میرے ضائع کئے گئے۔

ملزم وسیم اجمل

مزید : صفحہ آخر