مسئلہ کشمیر، حکومت کامودی کو عالمی عدالت میں نہ گھسیٹنا افسوسناک، رحمان ملک

مسئلہ کشمیر، حکومت کامودی کو عالمی عدالت میں نہ گھسیٹنا افسوسناک، رحمان ملک

  



اسلام آباد(آئی این پی) سینیٹ قائمہ کمیٹی داخلہ کے چیئرمین سینیٹر رحمان ملک نے کہا ہے بدقسمتی سے کشمیر پر جو سخت رویہ حکومت کو اپنانا چاہیے تھا وہ نہیں اپنایا گیا، ہونا یہ چاہئے تھا کہ آج مودی کو دنیا ایک ظالم کے طور پر جانتی، وزیر خارجہ کو خط لکھنے پر مجبور ہوں کہ حکومت مودی کیخلاف آئی سی سی و آئی سی جے میں جائے، بدقسمتی سے ہم نے مسئلہ کشمیرکو پس پشت ڈال دیا ہے،حکومت بتائے 5 اگست کے بعد وہ کشمیر کیلئے کیا کر سکی؟ اقوام متحدہ میں ہمارا مندوب اب تک کشمیر پر نہیں بولا۔ بدھ کے روز اسلام آبادمیں اپنی رہائش گاہ پر پریس کانفر نس سے خطاب کرتے ہوئے سینیٹر رحمان ملک نے کہا ہماری حکومت کشمیر کیلئے وہ کچھ نہ کرسکی جس کی قوم کو امید تھی کہ حکومت مودی کیخلاف عالمی عدا لت انصاف میں جائیگی، کشمیر میں بیہمانہ مظالم، عورتوں کی عصمت دری، قتل و غارت پر مودی کو عالمی عدالتوں میں گھسیٹا جائیگالیکن ایسا کچھ بھی نہیں ہوا۔بارہا حکومت کو مودی کیخلاف عالمی عدالتوں میں جانے کا مشورہ دیتا رہا ہوں۔ کاش حکومت میرے مشورے پر عمل کرکے مو د ی کے مظالم کیخلاف عالمی عدالت انصاف میں جاے اور اقوام متحدہ سے سیکورٹی کونسل کے استصواب رائے کی قراردادوں پرعملد ر آ مد کا مطا لبہ کرے،اقوام متحدہ سے کشمیر میں استصواب رائے کیلئے تاریخ تعین کروائے، کشمیری مظالم پر انسانی حقوق کمیشن کا تقرر عمل میں لایا جائے،اقوم متحدہ اب تک کشمیر پر سکیورٹی کونسل کے قراردوں پر عمل درآمد کروانے میں ناکام رہی ہے،عالمی برادری بھی کشمیر میں بھارتی مظا لم پر خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے۔ پاکستان کے پاس آ خری موقعہ مودی کو انٹرنیشنل کرمنل کورٹ میں لیجانے کا ہے پاکستان فوری طور پر روم اسٹی چیوٹ کے تحت مودی کیخلاف کشمیر میں ریاستی دہشتگردی کا مقدمہ درج کرے، روم اسٹی چیو ٹ کے تحت کوئی بھی فرد یاملک کسی بھی ظلم و زیادتی کیخلاف پٹیشن جمع کراسکتا ہے۔

رحمان ملک

مزید : صفحہ آخر