اسلامیہ یونیورسٹی: غیر قانونی بھرتی کیس میں دو سابق وائس چانسلرز،کنٹرولر امتحانات‘ رجسٹرار سمیت 5افسروں کو ضمانتی مچلکے جمع کرانیکا حکم

  اسلامیہ یونیورسٹی: غیر قانونی بھرتی کیس میں دو سابق وائس چانسلرز،کنٹرولر ...

  



بہاولپور(ڈسٹرکٹ رپورٹر)اینٹی کرپشن عدالت نے غیرقانونی طور پر بھرتی کیس میں اسلامیہ یونیورسٹی کی کنٹرولر امتحانات ذریت الزاہرہ سمیت دو سابق وائس چانسلرز اور رجسٹرار سمیت (بقیہ نمبر38صفحہ7پر)

پانچ افسران کو ایک ایک لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کروانے کا حکم دیدیا۔اینٹی کرپشن عدالت کے خصوصی جج ابراہیم اصغر نے کنٹرولر امتحانات ذریت الزاہرہ کے خلاف جعلی دستاویزات اور میرٹ کے برعکس تعیناتی کے حوالے سابق وائس چانسلر ڈاکٹر قیصر مشتاق،سابق وائس چانسلر ڈاکٹر بلال اے خان،سابق رجسٹرار ڈاکٹر عبدالستار،سابق ڈپٹی رجسٹرار نواالالسلام صدیقی اور کنٹرولر امتحانا ت ذریت الزاہرہ کے خلاف دائراستغاثہ زیر دفعہ 420/468/471ت پ کی سماعت کی۔استغاثہ کے مطابق کنٹرولر امتحانات ذریت الزاہرہ کو آسامی مشتہرکیے بغیر وارڈن تعینات کرکے 20انکریمنٹ ایڈونس دے دی گئیں اور تعیناتی کے وقت ذریت الزاہرہ کی تعلیمی قابلیت بی اے تھی لیکن انہوں نے سی وی پر ایم بی اے ڈگری ہولڈر ظاہر کیا۔بعدازاں ذریت الزاہرہ کو چیف وارڈن ترقی دیدی گئی اور پھر ڈپٹی کنٹرولر اور وہ اب بطور کنٹرولر امتحانات کام کر رہی ہیں۔ آڈٹ رپورٹ کے بعد ہائر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ نے بھی ذریت الزاہرہ کی تعیناتی کو غیر قانونی قرار دیدیا ہے۔اینٹی کرپشن عدالت کے خصوصی جج ابراہیم اصغر نے سماعت کے بعد کنٹرولر امتحانات ذریت الزاہرہ،سابق وائس چانسلر ڈاکٹر قیصر مشتاق،سابق وائس چانسلر ڈاکٹر بلال اے خان،سابق رجسٹرار ڈاکٹر عبدالستار،سابق ڈپٹی رجسٹرار نواالالسلام صدیقی کو آئندہ پیشی سے قبل ایک ایک لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کروانے کا حکم دیدیا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر