ذاتی استعمال کے موبائل سیٹ پر ظالمانہ ٹیکس سے عوام مشکلات سے دوچار

ذاتی استعمال کے موبائل سیٹ پر ظالمانہ ٹیکس سے عوام مشکلات سے دوچار

  



نوشہرہ (بیورورپورٹ) موجودہ حکومت کا اپنے زاتی استعمال کے موبائل سیٹ پر پی ٹی اے کی تصدیق کے ظالمانہ ٹیکس کے نفاذ سے عوام شدید مشکلات سے دو چار میزان بینک کے علاوہ نیشنل بینک سمیت تمام بینکوں نے ٹیکس وصولی سے انکار کر دیا ہے جبکہ یو فون فرنچائز نے رہی سی کسر پوری کرتے ہوئے ٹیکس وصولی کی اصل رقم کی بجائے 500روپے اضافی وصول کررہے ہیں عوام نے ہزاروں کی تعداد میں موبائل سیٹ ٹیکس نہ ادا کرنے کی وجہ سے گھروں رکھ دیئے تحریک انساف کو ووٹ دینے والے اب پچھتا رہے ہیں کیونکہ اشیاء خورد نوش کے علاوہ دیگر اشیاء ضروریہ پر ظالمانہ ٹیکس کے نفاز سے قوم کی زندگیا ں اجیر ہو گئی عوام پہلے سے بھی بڑھتی ہوئی مہنگائی سے پریشان تھے کہ موجودہ وفاقی حکومت نے پی ٹی اے کے زریعے موبائل سیٹ کی تصدیق کا ٹیکس بھی لاگو کردیا موجودہ حکومت کی اناڑی ٹیم عوام پر ظالمانہ ٹیکس تو لگا رہی ہے لیکن مجبوری کے تحت ٹیکس جمع کرنے والے دربدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں کیونکہ نیشنل بینک اور نجی بینکوں نے پی ٹی اے موبائل تصدیق ٹیکس سے صاف انکار کر دیا ہے اور یو فون فرنچائز نوشہرہ کینٹ کی انتظامیہ اور اہلکار عوام کی مجبوریوں سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ٹیکس جمع کرنے کے علاوہ 500روپے اضافی وصول کرتے ہیں جو کہ عوام نے حکومت سے اصلاح و احوال کا مطالبہ کیا ہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر