لاپتہ ہونیوالے حساس ادارے کے سابق افسر کرنل حبیب ظاہر کی موت کا مبینہ ڈیتھ سرٹیفکیٹ سوشل میڈیا پر وائرل لیکن اس کی حقیقت کیا ہے؟ دفتر خارجہ نے باضابطہ اعلان کردیا

لاپتہ ہونیوالے حساس ادارے کے سابق افسر کرنل حبیب ظاہر کی موت کا مبینہ ڈیتھ ...
لاپتہ ہونیوالے حساس ادارے کے سابق افسر کرنل حبیب ظاہر کی موت کا مبینہ ڈیتھ سرٹیفکیٹ سوشل میڈیا پر وائرل لیکن اس کی حقیقت کیا ہے؟ دفتر خارجہ نے باضابطہ اعلان کردیا

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاپتہ ہونیوالے حساس ادارے کے سابق افسر کرنل حبیب ظاہر کی موت کا مبینہ ڈیتھ سرٹیفکیٹ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے پر ترجمان دفتر خارجہ کا باضابطہ ردعمل سامنے آگیاہے۔

ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹرفیصل نے ہفتہ وار پریس بریفنگ میں بتایا ہے کہ کرنل ریٹائرڈحبیب طاہر 2سال قبل نیپال سےاغواہوئے تھے ،سماجی رابطوں کی ویب سائٹ پر ان کے انتقال کے حوالے سے جو سرٹیفکٹ وائرل ہورہا ہے وہ جعلی ہے۔انہوں نے کہا یہ ملک دشمن ایجنسیوں کا کام ہے جس سے کرنل حبیب کے اہلخانہ بہت پریشان ہیں۔

بھارت پر تنقید کرتے ہوئے ترجمان دفتر خارجہ نے کہا کہ بھارت سے خیر کی توقع نہیں وہ سکھ یاتریوں کیلئے بھی مشکلات پیدا کررہاہے ۔ ہماری طرف سے روزانہ پانچ ہزار یاتریوں کو آنے کی اجازت ہے۔ڈاکٹر فیصل نے کہا بھارت نے سیاچن پر زبردستی قبضہ کیاتھاوہ متنازعہ علاقہ ہے اس کو بھارت سیاحت کیلئے کیسے کھول سکتا ہے؟

انہوں نے کہا بھارت نے کشمیریوں کے بنیادی حقوق کئی ماہ سے سلب کیے ہوئے ہیں، مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ ایک سو دس روز سے لاک ڈاون جاری ہے۔ بنیادی ضروریات بھی کشمیریوں کو دستیاب نہیں ہیں،حریت رہنماو¿ں کو کئی روز سے قید کررکھا ہواہے،عالمی برادری مقبوضہ کشمیر کی مخدوش صورتحال کا نوٹس لے اور بھارت پر دباو ڈالے کہ وہ سیاسی قیدیوں کو رہا ،انٹرنیٹ اور موبائل سروس بحال کرے اور مقبوضہ جموں کشمیر میں انٹرنیشنل ہیومن رائٹس کے اہلکاروں کوجانےکی اجازت دے۔

ترجمان نے کہابھارت کاسب سے بڑی جمہوریت ہونےکادعویٰ سب کےسامنے عیاں ہوگیاہے،وہاں اقلیتوں کےساتھ ناانصافی ہورہی ہے اوربھارت میں انتہا پسندی تیزی سے بڑھ رہی ہے۔

مزید : اہم خبریں /قومی