کرتارپور راہداری کھلنے کے بعد سکھوں نے پاکستان سے ایک اور اپیل کردی

کرتارپور راہداری کھلنے کے بعد سکھوں نے پاکستان سے ایک اور اپیل کردی
کرتارپور راہداری کھلنے کے بعد سکھوں نے پاکستان سے ایک اور اپیل کردی

  



لاہور (ویب ڈیسک)  کرتارپور راہداری کھلنے کے بعد سکھ برادری نے ننکانہ صاحب امرتسردوستی بس سروس بحال کرنے کی اپیل کردی ہے،دونوں ہمسایہ ملکوں کے مابین کرتارپور راہداری کھلنے کے بعد اب سکھوں کی سب سے بڑی نمائندہ شرومنی گوردوارہ پربندھک کمیٹی نے پاکستان اوربھارت سے اپیل کی ہے کہ پنجاب بس سروس بحال کی جائے تاکہ سکھ یاتری آسانی سے جنم استھان ماتھا ٹیکنے جاسکیں۔

ایکسپریس کے مطابق  پاکستان اوربھارت کے مابین لاہوردہلی بس سروس کے بعد 24 مارچ 2006 میں سکھوں کے مقدس مقام جنم استھان ننکانہ صاحب سے امرتسرکیلئے پنج آب کے نام سے بس سروس شروع کی گئی تھی۔ یہ بس ہفتے میں دو دن چلتی ہے تاہم بھارت کی طرف سے مقبوضہ جموں وکشمیرکی خصوصی حیثیت ختم کئے جانے کے بعد پاکستان اوربھارت کے مابین دوستی بس سروس اگست 2019 سے معطل ہے۔

ورلڈسکھ فانڈیشن نے بھی دونوں حکومتوں سے اپیل کی ہے کہ کشیدگی اور تناو کے باوجود جس طرح دونوں ملکوں نے بڑے دل کا مظاہرہ کرتے ہوئے کرتار پور راہداری کھولی ہے اس طرح ننکانہ صاحب امرتسربس سروس بھی بحال ہونی چاہئے۔

مزید : قومی