کتنے فیصد پاکستانی سمجھتے ہیں کہ مختلف بیماریوں سے نجات کی ویکسین مذہبی عقائد کے خلاف ہے؟حیران کن انکشاف منظرعام پر

کتنے فیصد پاکستانی سمجھتے ہیں کہ مختلف بیماریوں سے نجات کی ویکسین مذہبی ...
کتنے فیصد پاکستانی سمجھتے ہیں کہ مختلف بیماریوں سے نجات کی ویکسین مذہبی عقائد کے خلاف ہے؟حیران کن انکشاف منظرعام پر

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)گیلانی اور گیلپ ریسرچ فاونڈیشن کی جانب سے کئے گئے ایک سروے میں حیران کن انکشاف ہوا ہے کہ 24فیصد پاکستانی سمجھتے ہیں کہ بیماریوں کیخلاف بنائی گئی ویکسینز کااستعمال اسلامی تعلیمات سے مطابق نہیں رکھتا ۔

گیلپ سروے میں ملک کے چاروں صوبے کے مردوںاور خواتین سے سوال کیاگیاتھا کہ آپ اس بات پر کتنا یقین رکھتے ہیں کہ ویکسینز آپ کے مذہبی عقائد سے مطابقت رکھتی ہیں،جس کے جواب میں چوالیس فیصد پاکستانیوں نے کہا کہ وہ اس بات سے پوری طرح متفق ہیں کہ مذہبی تعلیمات ان ادویات کے استعمال سے نہیں روکتیں۔انیس فیصد نے کہا وہ اس بات پر کسی حد تک یقین رکھتے ہیں کہ یہ ادویات مذہبی تعلیمات سے مطابق رکھتی ہیں تاہم گیارہ فیصد نے کہا وہ اس متفق نہیں ہیں جبکہ تیرہ فیصد نے سختی سے اس کی تردید کی۔تیرہ فیصد نے پتہ نہیں کاآپشن منتخب کیا۔

گیلپ سروے کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر بلال گیلانی نے کہا کہ پاکستان ان ممالک میں شامل ہے جہاں آج بھی پولیو کیخلاف جنگ جاری ہے اور گزشتہ برس توایسا موقع بھی آیا جب یہ خیال کیاگیا کہ شاید اس جنگ میں کامیابی نہ ملے۔ان کے مطابق پاکستان واحد ملک ہے جہاں ابھی تک پولیو کے جراثیم باقی ہیں۔دوہزار انیس میں یہاں چارنئے کیسز رجسٹرڈ ہوئے ہیں۔انہوں نے کہا اس طرح کے نظریات ویکسین کے ذریعے بیماریوں پر قابو پانے کی کوششوں کو نقصان پہنچا سکتے ہیں۔

مزید : تعلیم و صحت