معروف شاعرہ، ادیبہ فہمیدہ ریاض کا یومِ وفات(21 نومبر)

معروف شاعرہ، ادیبہ فہمیدہ ریاض کا یومِ وفات(21 نومبر)
معروف شاعرہ، ادیبہ فہمیدہ ریاض کا یومِ وفات(21 نومبر)

  

فہمیدہ ریاض:

ان کی پیدائش 28جولائی 1946ءکو میرٹھ میں ہوئی۔ وہ ترقی پسند ادیبہ، شاعرہ، سماجی کارکن تھیں۔ریڈیوپاکستان سے بھی وابستہ رہیں۔ اپنی شاعری میں حساس موضوعات کے تذکرے سے ہمیشہ تنازعات کا شکار رہیں۔ 21نومبر 2018ءکو وفات پا گئیں۔

نمونۂ کلام

کبھی دھنک سی اُترتی تھی ان نگاہوں میں 

وہ شوخ رنگ بھی دھیمے پڑے ہواؤں میں 

میں تیز گام چلی جا رہی تھی اس کی سمت 

کشش عجیب تھی اُس دشت کی صداؤں میں 

وہ اک صدا جو فریبِ صدا سے بھی کم ہے 

نہ ڈوب جائے کہیں تند رو ہواؤں میں 

سکوتِ شام ہے اور میں ہوں گوش بر آواز 

کہ ایک وعدے کا افسوں سا ہے فضاؤں میں 

مری طرح یوں ہی گم کردہ راہ چھوڑے گی 

تم اپنی بانہہ نہ دینا ہوا کی بانہوں میں 

نقوش پاؤں کے لکھتے ہیں منزلِ نا یافت 

مرا سفر تو ہے تحریر میری راہوں میں 

شاعرہ: فہمیدہ ریاض

Kabhi   Dhanak   Si   Utri   Thi   In   Nigaahon   Men

Wo   Shokh   Rang   Bhi    Dhmeemay   Parray   Hawaaon   Men

 Main   Taiz   Gaam   Chali   Ja   Rahi   Thi   Uss   Ki   Samt

Kashish    Ajeeb   Thi   Uss   Dasht   Ki   Sadaaon   Men

 Wo   Ik   Sadaa   Jo   Fariab -e-Sadaa   Say   Bhi    Kam   Hay

Na   Doob   Jaaey   Kahen   Tund   Roo   Hawaaon   Men

 Sakoot-e-Shaam   Hay   Aor   Main   Hun   Gosh   Bar   Awaaz

Keh   Waaday   Ka   Afsoon   Sa   Hay   Fazaaon   Men

 Miri   Tarah   Yun   Hi   Gum   Karda   Raah   Chorray   Gi

Tum   Apni   Baanh   Na   Daina   Hawaa   Ki   Baanhon   Men

 Naqoosh   Paaon   K   Likhtay   Hen    Manzil-e-Nayaaft

Mira   Safar   To   Hay   Tehreer   Meri   Raahon   Men

 Poetess: Fehmida   Riaz

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -