ممتاز شاعر وامق جونپوری کا یومِ وفات(21 نومبر)

ممتاز شاعر وامق جونپوری کا یومِ وفات(21 نومبر)
ممتاز شاعر وامق جونپوری کا یومِ وفات(21 نومبر)

  

وامق جونپوری:

وامق جونپوری کا اصل نام احمد مجتبیٰ تھا۔ 23اکتوبر1909ءکو اترپردیش میں پیدا ہوئے۔ بھارت کے ممتاز ترقی پسند شاعر تھے۔ ان کی تمام شاعری اسی نظریے کے ارد گرد گھومتی ہے۔ غزل اور نظم ان کا کلام ملتا ہے۔ ان کی نظم”بھوکا بنگال“ ان کی شہرت کا سبب ہے۔21نومبر 1998ء میں ان کا انتقال ہوا۔

نمونۂ کلام

شمعیں روشن ہیں آبگینوں میں 

داغ دل جل رہے ہیں سینوں میں 

پھر کہیں بندگی کا نام آیا 

پھر شکن پڑ گئی جبینوں میں 

لے کے تیشہ اٹھا ہے پھر مزدور 

ڈھل رہے ہیں جبل مشینوں میں 

ذہن میں انقلاب آتے ہی 

جان سی پڑ گئی دفینوں میں 

بات کرتے ہیں غم نصیبوں کی 

اور بیٹھے ہیں شہ نشینوں میں 

جن کو گرداب کی خبر ہی نہیں 

کیسے یہ لوگ ہیں سفینوں میں 

ہم صفیرو چمن کو بتلا دو 

سانپ بیٹھے ہیں آستینوں میں 

ہم نہ کہتے تھے شاعری ہے وبال 

آج لو گھر گئے حسینوں میں 

شاعر: وامق جونپوری

Shamen    Roshan   Hen   Aabgeenon   Men

Daagh-e-Dil   Jall   Rahay   Hen   Seenon   Men

 Phir   Kahen   Bandagi   Ka   Naam   Aaya

Phir   Shikan   Parrr   Gai   Balaaon   Men

 Lay   K   Teesha   Phir   Utha   Hay   Phir   Mazdoor

Dhall   Rahay   Hen    Jabal   Msheenon   Men

 Zehn   Men   Inqalaab   Aatay   Hen

Jaan   Si   Parr   Gai   Dafeenon   Men

 Baat  Kartay   Hen   Gham   Naseebon  Ki 

Aor   Baithay   Hen   Sheh   Nasheenon   Men

Jin   Ko   Gardaab   Ki   Khabar   Hi   Nahen

Kaisay   Yeh   Log   Hen   Safeenon   Men

 Ham   Safeero   Chaman   Ko   Batlaa   Do

Saanp   Baithay   Hen   Aasteenon   Men

 Ham   Na   Kehtay   Thay   Shaairi   Hay   Wabaal

Aaj   Lo   Ghir   Gaey   Haseenon   Men

 Poet: Wamiq   Jaunpuri

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -غمگین شاعری -