آئی ایم ایف نے پاکستان کومالی ضروریات کے ماحل 26ممالک میںسہرفہرست قرار دیدیا

آئی ایم ایف نے پاکستان کومالی ضروریات کے ماحل 26ممالک میںسہرفہرست قرار دیدیا

  

لاہور(کامرس رپورٹر) عالمی مالیاتی فنڈ نے مالی ضروریات کے حامل چھبیس ممالک میں پاکستان کو سرفہرست قرار دے دیا۔ رواں مالی سال سترہ کھرب روپے بجٹ خسارے سے بچنے کے لئے جی ڈی پی کا اکتیس فیصد قرضہ درکار ہے۔ آئی ایم ایف کی رپورٹ فسکل مانیٹر دوہزار بارہ میں کہا گیا ہے کہ پاکستان ان ممالک میں پہلی پوزیشن رکھتا ہے، جنھیں شدید مالی بحران اور قرضوں کی ضرورت ہے، پاکستان کو اپنے جی ڈی پی کے اکتیس فیصد کے برابر قرضے چاہئیں، آئی ایم ایف کے مطابق رواں مالی سال پاکستان کا بجٹ خسارہ سات اعشاریہ دو فیصد تک پہنچ جائے گا، تاہم حکومت کا اصرار ہے کہ خسارہ مقررہ ہدف چار اعشاریہ سات فیصد تک رہے گا، وزارت خزانہ کے مطابق جی ڈی پی کا ایک فیصد دو سو چھتیس ارب روپے کے برابر ہے، آئی ایم ایف کے تحت اگر بجٹ خسارہ سات اعشاریہ دو فیصد تک بڑھتا ہے تو اسے دور کرنے کے لئے حکومت کو سترہ کھرب روپے کی ضرورت ہوگی، رپورت کے مطابق برازیل کو جی ڈی پی کے سترہ فیصد،، بھارت کو گیارہ اعشاریہ تین فیصد،، ترکی کو دس اعشاریہ تین فیصد،، چین کو پانچ اعشاریہ چھ فیصد اور روس کو تقریبا دو فیصد قرضہ درکار ہے۔

مزید :

کامرس -