ڈاکٹرز کی بھرتی ، سندھ حکومت اور اپوزیشن میں ٹھن گئی

ڈاکٹرز کی بھرتی ، سندھ حکومت اور اپوزیشن میں ٹھن گئی

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) تحریری امتحان کے بغیر2ہزارڈاکٹربھرتی کرنے کے معاملے پرپیپلزپارٹی کی سندھ حکومت تحریک انصاف اورگرینڈ ڈیموکریٹک الائنس میں ٹھن گئی،تحریری امتحان کی بجائے محض انٹرویوکی بنیاد پرڈاکٹرزبھرتی کے خلاف تحریک انصاف نے عدالت جانے اورسندھ اسمبلی میں ٹف ٹائم دینے کی تیاری شروع کردی،مرکزی قیادت سے اجازت کے لیے سندھ حکومت منصوبے کی ابتدائی تفصیلات بھجوادی گئیں۔محکمہ اطلاعات،محکمہ تعلیم کے بعد حکومت سندھ نے محکمہ صحت میں تحریری امتحان کے بغیر2 ہزارسے زائد ڈاکٹرزبھرتی کرنے کی تیاری کرلی ہے جس کی اجازت سندھ کابینہ سے پہلے ہی حاصل کرلی گئی ہے جبکہ حکومت سندھ اورعالمی مالیاتی اداروں کے علاوہ ڈونرایجنسیزکے مابین یہ معاہدہ طے پایا تھا کہ سندھ حکومت سولہ گریڈ کے بعد کسی بھی گریڈ میں مقابلے کا امتحان پاس کیے بغیربراہ راست بھرتیاں نہیں کرے گی۔ مشیراطلاعات سندھ مرتضی وہاب کی جانب سے صوبے میں ڈاکٹروں کی کمی پوری کرنے کے لئے انٹرویوز کی بنیاد پرڈاکٹرز بھرتی کرنے کے فیصلے سے متعلق بیان کے بعد تحریک انصاف اورپیپلزپارٹی کی سندھ حکومت میں ٹھن گئی ہے تحریک انصاف اورگرینڈ ڈیموکریٹک الائنس نے سندھ اسمبلی کے علاوہ ڈاکٹرز کی براہ راست بھرتیوں کے خلاف سندھ ہائی کورٹ جانے کا فیصلہ کرلیا ہے جس کے لیے پارٹی قیادت سے اجازت طلب کرلی گئی ہے۔گرینڈ ڈیموکریٹک الائنس اورتحریک انصاف کے سندھ نے صوبائی مشیر قانون مرتضی وہاب کے اس بیان کوبھی مسترد کردیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ سندھ پبلک سروس کمیشن کے ذریعے امتحان لینا طویل پروسیجر ہے۔اس سے قبل پیپلزپارٹی کی سابقہ سندھ حکومت محکمہ اطلاعات سندھ اورمحکمہ تعلیم سندھ میں گریڈ سترہ کی پوسٹ پربراہ راست انفارمیشن آفیسراورکالجز میں لیکچررزبھرتی کرچکی ہے۔

مزید :

کراچی صفحہ اول -