مولانا فضل الرحمان کو شروع میں کیسے شکست دی جاسکتی تھی ؟ تجزیہ کار مظہر عباس نے بتادیا

مولانا فضل الرحمان کو شروع میں کیسے شکست دی جاسکتی تھی ؟ تجزیہ کار مظہر عباس ...
مولانا فضل الرحمان کو شروع میں کیسے شکست دی جاسکتی تھی ؟ تجزیہ کار مظہر عباس نے بتادیا

  



اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) تجزیہ کار مظہر عباس نے کہاہے کہ مولانا فضل الرحمان کو سیاسی طور پر بڑی اچھی طرح شکست دی جاسکتی تھی لیکن اب حکومت کچھ بھی کر لے ، مولانا فضل الرحمان کی تحریک میں جان پڑ گئی ہے۔

جیونیوز کے پروگرام ”رپورٹ کارڈ“میں گفتگو کرتے ہوئے مظہرعباس نے کہا کہ جس چیز کوسیاسی طورپر شکست دی جاسکتی ہے ۔ اس کو انتظامی طور پر شکست دینے کی کوشش کیوں کی جاتی ہے ؟ انہوں نے کہا کہ ہمارے ہاں مسئلہ یہ ہے کہ ہرحکومت اوور ری ایکٹ کرتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ 1977میں اگر ذوالفقار علی بھٹو فوری طور پر الیکشن کا اعلان کردیتے تو پوری تحریک بیٹھ جاتی اورآج بھی وزیر اعظم سے لیکر کوئی وزیر تک نہیں بول رہا ۔

مظہر عباس کا کہنا تھاکہ حکومت نے 7رکنی کمیٹی بنائی ہے اور اس میں قومی اسمبلی کے سپیکر اور چیئر مین سینیٹ کا نام ڈالنے کی منطق کیاہے ؟انہوں نے کہا کہ مولانا فضل الرحمان کو سیاسی طور پر بڑی اچھی طرح شکست دی جاسکتی تھی لیکن اب حکومت کچھ بھی کر لے ، مولانا فضل الرحمان کی تحریک میں جان پڑ گئی ہے ، اب اگر انتظامیہ کوسامنے لے آئیں تو یہ تحریک اور اوپر چلی جائے گی ۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد