کچھ تو تعلق کچھ تو لگاؤ |ابن صفی |

کچھ تو تعلق کچھ تو لگاؤ |ابن صفی |
کچھ تو تعلق کچھ تو لگاؤ |ابن صفی |

  

کچھ تو تعلق کچھ تو لگاؤ 

میرے دشمن ہی کہلاؤ 

دل سا کھلونا ہاتھ آیا ہے 

کھیلو  ، توڑو  ،  جی بہلاؤ 

کون ہے ہم سا چاہنے والا 

اتنا بھی اب دل نہ دکھاؤ 

حسن تھا جب مستور حیا میں 

عشق تھا خونِ دل کا رچاؤ 

 شب بھر کتنی راتیں گزریں 

حضرتِ دل اب ہوش میں آؤ 

شاعر: ابنِ صفی

Kucch   To   Talluq   Kuchh   To   Lagaao

Meray   Dushman   Hi   Kaihlaao

Dil   Sa   Khilona   Haath   Aaya   Hay

Khailo  ,   Torro  ,   Ji   Behlaao

Kon   Hay   Ham   Sa   Chaahnay   Waala

Itna    Bhi    Ab   Dil   Na   Dukhaao

 

Husn   Tha   Jab   Mastoor    Haya   Men

Eshq   Tha   Khoon-e-Dil    Ka   Rachaao

Shab   Bhar    Kitni   Raaten   Guzreen

Hazrat-e-Dil   Ab   Hosh   Men   Aao

 Poet: Ibn-e-Safi

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -