کچھ بھی تو اپنے پاس نہیں جز متاعِ دل |ابن صفی |

کچھ بھی تو اپنے پاس نہیں جز متاعِ دل |ابن صفی |
کچھ بھی تو اپنے پاس نہیں جز متاعِ دل |ابن صفی |

  

کچھ بھی تو اپنے پاس نہیں جز متاعِ دل 

کیا اس سے بڑھ کے اور بھی کوئی ہے امتحاں 

لکھنے کو لکھ رہے ہیں غضب کی کہانیاں 

لکھی نہ جا سکی مگر اپنی ہی داستاں 

اس بے وفا پہ بس نہیں چلتا تو کیا ہوا 

اڑتی رہیں گی اپنے گریباں کی دھجیاں 

دل سے دماغ و حلقۂ عرفاں سے دار تک 

ہم خود کو ڈھونڈتے ہوئے پہنچے کہاں کہاں 

ہم خود ہی کرتے رہتے ہیں فتنوں کی پرورش 

آتی نہیں ہے کوئی بلا ہم پہ ناگہاں 

شاعر: ابنِ صفی

Kuchh   Bhi   To   Apnay   Paas   Nahen   Juzz   Mataa-e-Dil

Kaya   Iss    Say   Barrh   K   Aor   Bhi   Koi   Hay   Imtehaan

 Likhnay   Ko   Likh   Rahay   Hen    Ghazab   Ki   Kahaniyaan

Likhi   Na   Jaa   Saki   Magar   Apni   Hi   Daastaan

 Uss    Be Wafaa   Pe   Bass   Nahen   Chalta   To   Kaya   Hua

Urrti   Rahen   Gi   Apnay   Garebaan    Ki   Dhajjiyaan

 Dil   Say   Dimaagh -o-Halqa-e-Irfaan   Say    Daar   Tak

Ham   Khud   Ko  Dhoondtay   Huay   Pahunchay    Kahan   Kahan

 Ham   Khud   Hi    Kartay   Rehtay   Hen   Fitnon   Ki   Parwarish

Aati   Nahen   Hay    Koi   Balaa   Ham   Pe   Nagahaan

 Poet: Ibn-e-Safi 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -