تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا |اخلاق محمد خان |

تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا |اخلاق محمد خان |
تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا |اخلاق محمد خان |

  

تیرے سوا بھی کوئی مجھے یاد آنے والا تھا 

میں ورنہ یوں ہجر سے کب گھبرانے والا تھا 

جان بوجھ کر سمجھ کر میں نے بھلا دیا 

ہر وہ قصہ جو دل کو بہلانے والا تھا 

مجھ کو ندامت بس اس پر ہے لوگ بہت خوش ہیں 

اس لمحے کو کھو کر جو پچھتانے والا تھا 

یہ تو خیر ہوئی دریا نے رخ تبدیل کیا 

میرا شہر بھی اس کی زد میں آنے والا تھا 

اک اک کر کے سب رستے کتنے سنسان ہوئے 

یاد آیا میں لمبے سفر پر جانے والا تھا 

شاعر: اخلاق محمد خان

 ( شعری مجموعہ:خواب کا در بند ہے؛سالِ اشاعت1985 )

Tairay   Siwaa   Bhi   Koi   Mujhay   Yaad   Aanay    Waala    Tha

Main   Warna   Yun   Hijr   Say   Kab   Ghabraanay   Waala    Tha

 Jaan   Bhoojh   Kar   Samajh   Kar   Main   Nay   Bhulaa   Diya

Har   Wo   Qissa   Jo   Dil   Ko   Baihlaanay   Waala    Tha

 Mujh   Ko   Nadaamat   Bass   Iss   Par   Hay   Log   Bahut   Khush   Hen

Uss   Lamhay   Ko   Kho   Kar   Jo   Pachhtaanay   Waala    Tha

 Yeh   To   Khair   Hui   Darya    Nay   Rukh   Tabdeel   Kiya

Mera   Shehr   Bhi   Uss   Ki   Zadd   Men   Aanay   Waala    Tha

 Ik   Ik   Kar   K   Sab   Rastay   Kitnay   Sansaan   Huay

Yaad   Aaya    Main   Lambay   Safar   Par   Jaanay   Waala    Tha

Poet: Akhlaq   Muhammad   Khan

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -