شام کی دہلیز تک آئی ہوا|اخلاق محمد خان |

شام کی دہلیز تک آئی ہوا|اخلاق محمد خان |
شام کی دہلیز تک آئی ہوا|اخلاق محمد خان |

  

شام کی دہلیز تک آئی ہوا

اور پھر آگے نہ چل پائی ہوا

آنکھ اُس منظر کو کیسے بھول جائے

پھول مرجھائے تو مرجھائی ہوا

خشک پتوں کے سوا کچھ بھی نہ تھا

شاخ سے اُتری تو پچھتائی ہوا

ریت پھیلی اور پھیلی دور دور

آسماں سے کیا خبر لائی ہوا

آئنے بے عکس ہیں ، مدت ہوئی

دیکھ کے ، یہ آنکھ بھر لائی ہوا

شاعر: اخلاق محمد خان

 ( شعری مجموعہ:خواب کا در بند ہے؛سالِ اشاعت1985 )

Shaam   Ki   Daihleez   Tak   Aai    Hawaa

Aor   Phir   Aagay   Na   Chall   Paai    Hawaa

 Aankh   Uss   Manzar   Ko  Kaisay   Bhool   Jaaey

Phool   Murjhaaey   To   Murjhaai    Hawaa

 Khushk   Patton   K   Siwaa   Kuchh   Bhi   Na   Tha

Shaakh   Say   Utrai   To   Pachhtaai    Hawaa

 Rait   Phaili   Aor   Phaili   Door   Door

Aasmaan   Say   Kaya   Khabar   Laai    Hawaa

 Aainay    Be Aks   Hen   ,   Muddat   Hui

Daikh   K   ,   Yeh   Aankh   Bhar   Aai    Hawaa

 

Poet: Akhlaq     Muhammad    Khan

 

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -